• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 157667

    عنوان: سجدہ سہوہ كب واجب ہوتا ہے؟

    سوال: سجدہ سہوہ کہا ں واجب ہے ؟ چار رکعت والی نماز میں پہلے التحیات کے بعد کتنی درودشریف پڑھنے کے بعد سجدہ سہوہ واجب ہے ؟

    جواب نمبر: 157667

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:450-387/sn=5/1439

    (۱) سجدہٴ سہو در حقیقت ترکِ واجب سے لازم ہوتا ہے اور یہ ترکِ واجب کبھی فرض یا واجب عمل کو اپنی اصل جگہ سے موٴخر یا مقدم کرنے کی صورت میں پایا جاتا ہے، کبھی فرض یا واجب عمل کو مکرر ادا کرنے کی صورت میں اور کبھی کسی واجب کی صفت کو بدلنے کی صورت میں پایا جاتا ہے، کتب فقہ وفتاوی میں اس کی تفصیلات موجود ہیں۔ (دیکھیں: کبیری، ۴۵۵-۴۵۶، فتاوی دارالعلوم ۴/۳۷۵، وغیرہ

    (۲) راجح قول کے مطابق اگر کوئی شخص فرض نماز کے قعدہ اولیٰ میں تشہد کے بعد نسیاناً اللھم صلی علی محمد تک درود شریف پڑھ دے تو اس پر سجدہٴ سہو واجب ہے۔ وتأخیر قیام إلی الثالثة بزیادة علی التشھد بقدر رکن وقیل بحرف، وفي الزیلعي: الأصح وجوبہ باللہم صلّ علی محمّد (درمختار) وقال الشامي: جزم بہ المصنف فی متنہ فی فصل إذا أراد الشروع وقال إنہ المذہب واختارہ فی البحر تبعا للخلاصة والخانیة. والظاہر أنہ لا ینافی قول المصنف ہنا بقدر رکن تأمل․ (درمختار مع الشامي: ۲/ ۵۴۴، ط: زکریا) نیز دیکھیں: درمختا رمع الشامی: (۲/۲۲۰، ط: زکریا) مسائل سجدہء سہو (ص: ۶۲)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند