• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 154034

    عنوان: کیا میں سعودی میں تنہا ایک مثل میں عصر كی نماز ادا کرسکتا ہوں

    سوال: سعودی عرب میں اگر میری عصر کی نماز با جماعت فوت ہوجائے تو کیا میں تنہا ایک مثل میں ادا کرسکتا ہوں یا مثلین میں ادا کرنا ضروری ہے ؟ براہ کرم رہنمائی فرمائیں۔

    جواب نمبر: 154034

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa: 1322-1268/Sn=1/1439

    احناف کے نزدیک مفتی بہ قول مثلِ ثانی پر ہی عصر ادا کرنے کا ہے؛ اس لیے صورت مسئولہ میں عصر کی نماز مثلِ ثانی ہی پر پڑھنی چاہیے الا یہ کہ کوئی مجبوری ہو مثلاً سفر کے لیے نکلنا ہو اور مثلِ ثانی تک موخر کرنے کی صورت میں نماز فوت ہونے کا اندیشہ ہو تو پھر مثل اول میں بھی پڑھنے کی گنجائش ہوگی۔

    ووقت الظہر من زوالہ ․․․ إلی بلوغ الظل مثلیہ (درمختار) وقال الشامي: ہذا ظاہر الروایة عن الإمام نہایة، وہو الصحیح، بدائع ومحیط وینابیع، وہو المختار، غیاثیة، واختارہ الإمام المحبوبی وعول علیہ النفي وصدر الشریعة، تصحیح قاسم واختارہ أصحاب المتون وارتضاہ الشارحون․․․ والأدلة تکافأت ولم یظہر ضعف دلیل الإمام؛ بل أدلتہ قویة أیضا کما یعلم من مراجعة المطولات وشرح المنیة وقد قال في البحر: لا یعدل عن قول الإمام إلی قولہما أو قول أحدہما إلا لضرورة الخ (درمختار مع الشامي: ۲/۶۴، ط: زکریا)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند