• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 148900

    عنوان: کیا نابینا آدمی امامت کروا سکتا ہے ؟ نابینا آدمی اپنی صفائی کیسے رکھ سکتا ہے ؟

    سوال: کیا نابینا آدمی امامت کروا سکتا ہے ؟ نابینا آدمی اپنی صفائی کیسے رکھ سکتا ہے ؟

    جواب نمبر: 148900

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 641-611/H=6/1438

    (۱) کرواسکتا ہے، بعض صحابہٴ کرام جیسے حضرت عبد اللہ ابن ام مکتوم اور حضرت عتبان مالک رضی اللہ عنہم اجمعین نابینا تھے اور کبھی کبھی ان حضرات کا حضرت نبی اکرم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی موجودگی میں امامت کرانا حدیث شریف سے ثابت ہے۔ البحر الرائق میں بھی اس کی صراحت ہے۔

    (۲) جس طرح دیگر امور کو بعض نابینا حضرات بہت عمدگی سے انجام دیتے ہیں، اسی طرح صفائی ستھرائی اور پاکی کا لحاظ بھی بہت عمدہ طریق پر رکھتے ہیں، ایسے نابینا حضرات کی امامت بلاکراہت درست ہے جب کہ اوصافِ امامت سے پوری طرح متصف بھی ہوں تو کراہت کی کوئی وجہ نہیں ہے؛ البتہ کوئی نابینا طہارتِ مطلوبہ حاصل کرنے میں قاصر ہو یا سستی برتتا ہو تو اس کی امامت مکروہ ہوگی، حاصل یہ کہ محض نابینا ہونے کی وجہ امامت کو مکروہ قرار نہ دیا جائے گا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند