• معاشرت >> اخلاق و آداب

    سوال نمبر: 15612

    عنوان:

    میرے والدین کے بارے میں ایک مسئلہ ہے۔میرے والدین فاتحہ اور درگاہ کا عقیدہ رکھتے ہیں اور وہ لوگ بہت سختی سے تبلیغی جماعت کے خلاف ہیں، میں بھی یہی عقیدہ رکھتا تھا، لیکن جب میں نے ملا پلی جامع مسجد میں جانا شروع کیا جو کہ آندھرا پردیش کا مرکز ہے تو مجھ کو اللہ کے راستہ میں پیسہ اور وقت لگانے کی اہمیت کے بارے میں معلوم ہواایمان سیکھنے کے لیے۔اب میں الجھن کا شکار ہوں، اگر میں جاتاہوں او راپنے والدین کو کہتاہوں کہ میں جماعت میں جانا چاہتاہوں تو وہ مجھ کو گھر سے باہر نکلنے کی اجازت نہیں دیں گے حتی کہ نماز کے لیے بھی۔ تو اس صورت حال میں کیا مجھ کو ان تمام کے بارے میں اپنے والدین کو بتانے کی ضرورت ہے یا صرف تمام اجتماعات میں شریک ہونا جاری رکھوں اور اپنے والدین کے لیے دعا کروں، تاکہ ......

    سوال:

    میرے والدین کے بارے میں ایک مسئلہ ہے۔میرے والدین فاتحہ اور درگاہ کا عقیدہ رکھتے ہیں اور وہ لوگ بہت سختی سے تبلیغی جماعت کے خلاف ہیں، میں بھی یہی عقیدہ رکھتا تھا، لیکن جب میں نے ملا پلی جامع مسجد میں جانا شروع کیا جو کہ آندھرا پردیش کا مرکز ہے تو مجھ کو اللہ کے راستہ میں پیسہ اور وقت لگانے کی اہمیت کے بارے میں معلوم ہواایمان سیکھنے کے لیے۔اب میں الجھن کا شکار ہوں، اگر میں جاتاہوں او راپنے والدین کو کہتاہوں کہ میں جماعت میں جانا چاہتاہوں تو وہ مجھ کو گھر سے باہر نکلنے کی اجازت نہیں دیں گے حتی کہ نماز کے لیے بھی۔ تو اس صورت حال میں کیا مجھ کو ان تمام کے بارے میں اپنے والدین کو بتانے کی ضرورت ہے یا صرف تمام اجتماعات میں شریک ہونا جاری رکھوں اور اپنے والدین کے لیے دعا کروں، تاکہ اللہ تعالی مجھ کو اور میرے والدین کو سیدھا راستہ دکھائے؟ میرے والدین مجھ سے فاتحہ دینے کو کہتے ہیں اور درگاہ پر جانے کو کہتے ہیں اور اس صورت میں اگر فاتحہ دینے کا بہانہ کروں یا صرف جھوٹ کہوں کہ میں نے درگاہ کی زیارت کی ہے کیا یہ اسلام کے مطابق حرام ہے؟ برائے کرم میری اس بارے میں رہنمائی فرماویں، اور میرے لیے اور میرے والدین کے لیے اور پوری امت کے لیے کے لیے دعا کریں۔ والسلام

    جواب نمبر: 15612

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1381=1381/1430/م

     

    اپنے والدین کے لیے دعا کرتے رہیں، ان کو ہروقت اپنی تمام تفصیلات بتلانا ضروری نہیں کہ میں فلاں جگہ جارہا ہوں، حسب موقع ومصلحت تبلیغی اجتماعات میں شرکت کرتے رہیں، والدین، فاتحہ دینے اور درگاہ پر جانے کو کہیں تو آپ نرمی کے ساتھ صحیح مسئلہ سمجھادیا کریں اور مناسب عذر کردیا کریں، صریح جھوٹ بولنے سے احتراز کریں۔ اللہ تعالیٰ آپ کے والدین اور پوری امت کو صحیح راستے پر چلنے کی توفیق عطا فرمائے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند