• عبادات >> ذبیحہ وقربانی

    سوال نمبر: 160115

    عنوان: قربانی کا جانور بدلنا کیسا ہے ؟

    سوال: کسی آدمی نے گائے خریدکردوسرے کو قربانی کرنے کے واسطے دیا اتفاق سے وہ جانور حاملہ نکل گیا تو کیا اس کے بدلے اتناہی قیمت کے عوض یا اس سے کم میں دوسرا جانور خرید نا کیسا ہے ؟مدلل جواب مطلوب ہے ۔

    جواب نمبر: 16011501-Sep-2020 : تاریخ اشاعت

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:805-415/sn=7/1439

    سوال سے یہ واضح نہیں کہ اس شخص نے دوسرے کو قربانی کرنے کے لیے جو جانور دیا یہ توکیلاً ہے یا تملیکاً؟ بہرحال اگرتوکیلاً ہے تو دوسرا آدمی جو وکیل ہے اس کے لیے موکل کی اجازت کے بغیر اس جانور کو بدلنا شرعاً جائز نہیں ہے، اگر یہ دینا تملیکا ہے تو یہ شخص (دوسرا) مالک ہے، وہ اس کو بدل سکتا ہے، واضح رہے کہ حاملہ جانور کی قربانی درست ہے؛ البتہ فقہاء نے یہ صراحت کی ہے کہ جو جانور قریب الولادت ہو اس کی قربانی مکروہ ہے گو قربانی بہرصورت صحیح ہوجائے گی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند