• متفرقات >> دیگر

    سوال نمبر: 68419

    عنوان: کسی قادیانی سے کوئی ربط وضبط اور تعلق وغیرہ نہ رکھیں

    سوال: میں ایک اکاؤنٹینٹ ہوں، اور میں اکاؤنٹ سے متعلق کام کرتاہوں، کبھی کبھار مجھے اپنے بزنس کے کام کو پورا کرنے کے لیے ایسے شخص سے کام کرانا پڑتاہے جو قادیانی ہے اور میں اس کو اس کا پیسہ دیتاہوں تو کیا ایسے قادانی سے اس طرح کا تعلق رکھنا درست ہے؟

    جواب نمبر: 68419

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 1214-1253/N=11/1437

    قادیانی لوگ ختم نبوت وغیرہ کے انکار کی وجہ سے تمام علمائے اسلام کے نزدیک متفقہ طور پر کافر ومرتد اور دائرہ اسلام سے خارج ہیں اور شریعت میں مرتدین کے احکام عام کافروں کی بہ نسبت بہت سخت ہیں، ان سے کسی قسم کا تعلق رکھنا درست نہیں (احسن الفتاوی ۱: ۴۶، ۶: ۳۵۹، ۳۶۰، ۷: ۳۴۰، ۸: ۲۵۰ - ۲۵۳، ۱۱: ۳۰۹، ۳۱۰، فتاوی ختم نبوت ۱: ۴۳۵ بحوالہ: فتاوی محمودیہ، وغیرہ) ؛ اس لیے آپ کبھی کبھی اپنے بزنس کے کام کو پورا کرنے کے لیے جو کسی قادیانی سے اجرت پر کام کراتے ہیں، یہ درست نہیں، آپ اس کے لیے قادیانی کے علاوہ کسی اور کو تلاش کریں، کسی قادیانی سے کوئی ربط وضبط اور تعلق وغیرہ نہ رکھیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند