• متفرقات >> دیگر

    سوال نمبر: 149165

    عنوان: سورج اور چاند گرہن کے متعلق لوگ کہتے ہیں کہ حاملہ عورتیں آگ سے دور رہیں كیا یہ بات صحیح ہے؟

    سوال: حضرت مفتی صاحب! مجھے یہ پوچھنا تھا کہ سورج اور چاند گرہن کے متعلق لوگ کہتے ہیں کہ حاملہ عورتیں آگ سے دور رہیں اور گھر سے باہر نہ نکلیں اور چھری وغیرہ کا استعمال نہ کریں، تو اس کی کیا حقیقت ہے؟

    جواب نمبر: 149165

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa: 747-670/sn=7/1438

    اس طرح کی کوئی بات قرآن وحدیث سے ثابت نہیں ہے، یہ سب لوگوں کی اپنی بنائی ہوئی ہے، سورج گرہن یا چاند گرہن کے وقت مرد وعورت ہرایک کے لیے عام نفل نماز کی طرح دو رکعت نماز پڑھنا اور دعا واستغفار کرنا مسنون ہے اور بہتر ہے کہ نماز میں قرأت لمبی (مثلاً سورہٴ بقرہ کی مقدار) کی جائے، اس کے بعد دعا کی جائے تا آنکہ ”گرہن“ ختم ہوجائے۔ سن رکعتان کہیئة النفل الکسوف من غیر زیادة ․․․ وسن تطویلہا بنحو سورة البقرة․․․ ولو خففہا جاز ولا یکون مخالفًا للسنة؛ لأن المسنون استیعاب الوقت بالصلاة والدعاء الخ (مراقي الفلاح مع حاشیة للطحاطاوي: ۱/ ۵۳۳، ط: دار الکتاب)

    --------------------------

    جواب صحیح ہے البتہ ضرورت پر سورج گرہن یا چاند گرہن کی نماز کے متعلق مزید تفصیلات کسی مقامی مفتی سے سمجھ لی جائیں۔ (ن)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند