• معاملات >> دیگر معاملات

    سوال نمبر: 9033

    عنوان:

    اکثر جب جویلری سیٹ (زیور ات) لینے جاتے ہیں تو دکاندار کو اکثر لوگ ایڈوانس دے دیتے ہیں اور پھر کچھ دنوں بعد جاکر وہ سیٹ اس سے لیتے ہیں۔ کیا اس طرح کرنا صحیح ہے؟ اس میں سود کا تو کوئی احتمال نہیں ہے؟

    سوال:

    اکثر جب جویلری سیٹ (زیور ات) لینے جاتے ہیں تو دکاندار کو اکثر لوگ ایڈوانس دے دیتے ہیں اور پھر کچھ دنوں بعد جاکر وہ سیٹ اس سے لیتے ہیں۔ کیا اس طرح کرنا صحیح ہے؟ اس میں سود کا تو کوئی احتمال نہیں ہے؟

    جواب نمبر: 9033

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 2523=2083/ ب

     

    یہ اُدھار بیع میں داخل ہے، ایسا کرنا جائز نہیں، یہ بھی سود میں داخل ہے۔

    نوٹ: البتہ سیٹ لینے کے وقت وہ دکاندار سے اپنے پیسے مانگ کر ہاتھ میں لے لے پھر وہی پیسے دے کر ہاتھ درہاتھ لین دین کرلے تو درست ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند