• معاملات >> دیگر معاملات

    سوال نمبر: 38005

    عنوان: والدین سے الگ رہ کر اپنی محنت سے جو مال وجائداد بنائی ہے اس کے مالک تن تنہا آپ ہیں،

    سوال: میں پہلے آٹھ دس سالوں سے اپنے والدین سے الگ رہتاہوں۔ اس دوران میں نے اللہ کے فضل سے اور اپنی محنت سے جو مال اور جائداد بنائی ہے ، کیا اس میں میرے بھائی بہن یا والدین کا حصہ ہوگاوصیت میں؟ اور کیا میں اپنی زندگی میں ہی یہ حصہ ان کو دے سکتاہوں؟ اور کیا میں اپناپورا مال اپنی ضرورت کے لیے کچھ مال چھوڑ کر باقی کسی بھی ذریعہ سے اللہ کے راستہ میں یا اپنے اہل و عیال کے نام پر کرسکتاہوں؟

    جواب نمبر: 38005

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 652-559/B=5/1433 والدین سے الگ رہ کر اپنی محنت سے جو مال وجائداد بنائی ہے اس کے مالک تن تنہا آپ ہیں، اس میں بھائی بہن یا والدین کا کوئی حصہ نہیں ہے۔ اورآپ کے مرنے کے بعد اس میں والدین کا حصہ ہوگا۔ آپ کے لڑکے نہ ہوں تو بھائی بہن کا بھی حصہ ہوگا۔ آپ اپنے مال وجائداد کے مالک ومختار ہیں، آپ اپنی زندگی میں سب یا کچھ اہل وعیال کو دے سکتے ہیں اور کچھ مال اللہ کے راستہ میں بھی دے سکتے ہیں۔آپ کو پورا اختیار حاصل ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند