• معاشرت >> نکاح

    سوال نمبر: 7008

    عنوان:

    کیا میاں اور بیو ی کے لیے یہ جائز ہے کہ وہ جماع یا مباشرت سے قبل چوما چاٹی کے دوران ایک دوسرے کے مخصوص اعضاء کودیکھیں؟ (۲) اگر میاں اوربیوی چھوٹے سے کمرہ میں ہوں تو کیا وہ بغیر کپڑے کے جماع کرسکتے ہیں؟

    سوال:

    کیا میاں اور بیو ی کے لیے یہ جائز ہے کہ وہ جماع یا مباشرت سے قبل چوما چاٹی کے دوران ایک دوسرے کے مخصوص اعضاء کودیکھیں؟ (۲) اگر میاں اوربیوی چھوٹے سے کمرہ میں ہوں تو کیا وہ بغیر کپڑے کے جماع کرسکتے ہیں؟

    جواب نمبر: 7008

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 763=763/ م

     

    (۱) جائز ہے لیکن نہ دیکھنا چاہیے، کیوں کہ اس سے نسان پیدا ہوتا ہے اور بینائی کمزور ہوتی ہے، وینظر الرجل․․․․ من عرسہ وأمتہ الحلال إلی فرجھا بشھوة وغیرھا، والأولی ترکہ لأنہ یورث النسیان الخ وفي الشامیة، ویضعف البصر (در مع الشامي)

    (۲) کرسکتے ہیں لیکن خلاف اولیٰ ہے کہ بالکلیہ کپڑے اتار دیئے جائیں، لقولہ علیہ السلام: إذا أتی أحدکم أھلہ فلیستتر ما استطاع ولا یتجردان تجرد العیر، ولأن ذلک یورث النسیان لورود الأثر (شامي)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند