• معاشرت >> نکاح

    سوال نمبر: 605565

    عنوان:

    نکاح سے پہلے لڑکی کو كون دیكھ سكتا ہے؟

    سوال:

    میرا سوال یہ ہے کہ کیا نکاح سے قبل لڑکے کے والد اور بڑے بھائی لڑکی کو دیکھ سکتے ہیں کیونکہ میرے بڑے بھائی کا کہنا ہے کہ اگر فتنے کا اندیشہ نہ ہو تو چہرہ کھولا جا سکتا ہے اور یہاں تو کوئی فتنہ والی بات ہی نہیں ہے میں نے امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کی بھی ایک ایسا ہی مسئلہ پڑھا ہے اگر فتنے کا اندیشہ نہ ہو تو عورت کا چہرہ کھولنا جائز ہے ۔

    برائے مہربانی جلد از جلد مجھے اس کا جواب بتا دیں ۔

    جواب نمبر: 605565

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 982-812/M=12/1442

     نکاح سے پہلے خود وہ لڑکا جو نکاح کا ارادہ رکھتا ہے لڑکی کو کسی حیلے بہانے سے دیکھ سکتا ہے، لیکن لڑکے کے والد یا بھائی کے لیے لڑکی کو دیکھنا جائز نہیں فتنہ کا اندیشہ رہتا ہے، اس لیے قصداً نامحرم لڑکی کو دیکھنے سے احتراز لازم ہے۔ لڑکے کے حق میں ضرورت ہے اس لیے اس کو دیکھنے کی اجازت وارد ہے۔ امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ کے مذکور قول کا پورا حوالہ نقل کرنا چاہئے تھا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند