• معاشرت >> نکاح

    سوال نمبر: 59358

    عنوان: ایک بات پوچھنا چاہتاہوں کہ میرے بھائی کا بیٹا ہے جو دو سال تین مہینے کا ہے اور میں اسے رضاعی بیٹا بنانا چاہتاہوں، میرا دو مہینے کا بیٹا اور تین سال کی بیٹی ہے ، کیا صورت ہے؟کیادودھ نکال کر پلاسکتے ہیں ؟میں اس کو اپنا رضاعی بیٹا بنانا چاہتاہوں، ہمارا مسلک سنی مسلک ہے۔

    سوال: ایک بات پوچھنا چاہتاہوں کہ میرے بھائی کا بیٹا ہے جو دو سال تین مہینے کا ہے اور میں اسے رضاعی بیٹا بنانا چاہتاہوں، میرا دو مہینے کا بیٹا اور تین سال کی بیٹی ہے ، کیا صورت ہے؟کیادودھ نکال کر پلاسکتے ہیں ؟میں اس کو اپنا رضاعی بیٹا بنانا چاہتاہوں، ہمارا مسلک سنی مسلک ہے۔

    جواب نمبر: 59358

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 809-633/D=7/1436-U مفتی بہ قول کے مطابق دودھ پینے کی مدت دو سال ہے، اس کے بعد دودھ پلانا حرام ہے۔ لہٰذا بھائی کے بچہ کی عمر جب دو سال تین ہوچکی تو آپ کی بیوی اسے دودھ نہ پلائیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند