• معاشرت >> نکاح

    سوال نمبر: 57319

    عنوان: رشتے کے لیے تصویر

    سوال: کیا رشتے کے لیے لڑکی کی تصویر دی جاسکتی ہے ؟ اگر لڑکی شرعی پردہ کرتی ہو اور یہ کہے کہ لڑکے والے گھر آکر دیکھیں تو کیا لڑکی کی بات غلط ہے ؟ لڑکا بیرون ملک رہتا ہو تو اس کو رشتہ طے ہونے سے قبل لڑکی کی تصویر انٹرنیٹ کے زریعے دی جا سکتی ہے ؟براہ مہربانی اس مسئلے پر رہنمائ فرمادیں۔ آج کل رشتہ ناطے میں لڑکی کو رشتہ سے قبل ہر طرح سے نمائش کرانے کا رجحان ہے ۔جو کہ سراسر اسلام کے احکامات کے منافی ہے

    جواب نمبر: 57319

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 274-227/D=3/1436-U تصویر کھینچنا کھنچوانا خواہ کاغذ پر ہو یا نیٹ پر ناجائز ہے، اس پر احادیث میں سخت وعید وارد ہوئی ہے، چنانچہ ایک حدیث میں ہے کہ اللہ کے یہاں سب سے سخت عذاب تصویر بنانے والوں کو ہوگا: أشد الناس عذابًا عند اللہ المصورون (مشکاة: ۲/۳۸۵) البتہ ضرورت اور مجبوری کی حالت مستثنیٰ ہے، رشتہ طے کرتے وقت لڑکے کو لڑکی کا فوٹو دیکھنا دکھانا کوئی مجبور ی نہیں، نیز تصویر سے صورت حال کی صحیح عکاسی بھی نہیں ہوتی بلکہ کبھی خلاف واقعہ چیزوں کی نمائش ہوجاتی ہے، پس لڑکی کا رجحان صحیح ہے، لہٰذا گھر کی جن عورتوں پر لڑکے کو اعتماد ہے ان کو لڑکی کے گھر بھیج دیں تاکہ وہ اس کی صحیح صورت حال کا جائزہ لے کر لڑکے کو باخبر کردیں: وفي الرد المحتار: ویظہر من کلامہم أنہ إذا لم یمکنہ النظر یجوز إرسال نحو امرأة تصف لہ حالہا بطریق الأولی ولو غیر الوجہ والکفین: ۹/۵۳۳۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند