• معاشرت >> نکاح

    سوال نمبر: 14496

    عنوان:

    میری گزشتہ سال دسمبر میں شادی ہوئی ہے۔ میں اپنی بیوی کو پسند نہیں کرتا۔ مگر یہ بات میں اپنے گھر والوں سے نہیں کرسکا، کیوں کہ وہ میرے رشتہ کے لیے بہت جگہ گئے پر ہر جگہ انہیں منع ہوگیا۔ اب میں اپنی بیوی کے ساتھ رہنا نہیں چاہتاہوں۔ اس کی ایک وجہ تو میرا نا پسند کرنا ہے اور دوسری وجہ شادی کے دو ہفتہ کے بعد ہی میں نے اس کے موبائل پر میسج پڑھ لیے تھے جس میں وہ دوسرے لڑکوں سے پیارو محبت کی باتیں کرتی تھی۔ میں نے جب اس سے پوچھا تو اس نے کہا کہ ہاں وہ شادی سے پہلے چار پانچ سال سے ایسا کررہی ہے اور اس نے شادی کے بعد بھی میسج کئے ہیں پر وہ کسی سے آج تک نہیں ملی ہے۔ اب میرا اس کے ساتھ رہنے کا بالکل دل نہیں کرتا ہے، کسی بھی صورت میں۔میں کیا کروں؟

    سوال:

    میری گزشتہ سال دسمبر میں شادی ہوئی ہے۔ میں اپنی بیوی کو پسند نہیں کرتا۔ مگر یہ بات میں اپنے گھر والوں سے نہیں کرسکا، کیوں کہ وہ میرے رشتہ کے لیے بہت جگہ گئے پر ہر جگہ انہیں منع ہوگیا۔ اب میں اپنی بیوی کے ساتھ رہنا نہیں چاہتاہوں۔ اس کی ایک وجہ تو میرا نا پسند کرنا ہے اور دوسری وجہ شادی کے دو ہفتہ کے بعد ہی میں نے اس کے موبائل پر میسج پڑھ لیے تھے جس میں وہ دوسرے لڑکوں سے پیارو محبت کی باتیں کرتی تھی۔ میں نے جب اس سے پوچھا تو اس نے کہا کہ ہاں وہ شادی سے پہلے چار پانچ سال سے ایسا کررہی ہے اور اس نے شادی کے بعد بھی میسج کئے ہیں پر وہ کسی سے آج تک نہیں ملی ہے۔ اب میرا اس کے ساتھ رہنے کا بالکل دل نہیں کرتا ہے، کسی بھی صورت میں۔میں کیا کروں؟

    جواب نمبر: 14496

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1210=1210/م

     

    آپ اپنی بیوی کو حکمت اور نرمی سے سمجھائیں کہ وہ آئندہ کسی اجنبی لڑکے سے کوئی تعلق نہ رکھے کہ شریعت میں یہ حرام وناجائز ہے اور گناہ کا کام ہے، اجنبی لڑکوں سے پیار ومحبت قائم کرنے کے بجائے آپ (اپنے شوہر) سے محبت کریں، بیوی موبائل کا غلط استعمال کرتی ہے تو موبائل اس کے پاس نہ رکھا کریں۔ اس کی غلطیوں کو نظرانداز کردیں۔ اور آپ بھی اس سے محبت کا اظہار کریں، اس کے حقوق کی ادائیگی میں کمی نہ کریں، حسن معاشرت کو پوری طرح برقرار رکھیں، ان شاء اللہ جو کبیدگی اور اور ناپسندیدگی ہے دو رہوجائے گی، اور زوجین مین الفت ومحبت پیدا ہوگی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند