• عبادات >> جمعہ و عیدین

    سوال نمبر: 7420

    عنوان:

    دارالحرب میں نمازجمعہ کے بارے میں کیا فتوی ہے؟ میں نے سنا ہے کہ امام ابوحنیفہ رحمة اللہ علیہ کے نزدیک غیر اسلامی ملک میں نماز جمعہ نہیں ہے لیکن فی الواقع اس کی اجازت نہیں ہے۔ کیا یہ صحیح ہے؟ برائے کرم مستند حنفی کتابوں کے حوالہ سے جواب عنایت فرماویں۔

    سوال:

    دارالحرب میں نمازجمعہ کے بارے میں کیا فتوی ہے؟ میں نے سنا ہے کہ امام ابوحنیفہ رحمة اللہ علیہ کے نزدیک غیر اسلامی ملک میں نماز جمعہ نہیں ہے لیکن فی الواقع اس کی اجازت نہیں ہے۔ کیا یہ صحیح ہے؟ برائے کرم مستند حنفی کتابوں کے حوالہ سے جواب عنایت فرماویں۔

    جواب نمبر: 7420

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1480=1395/ د

     

    جس ملک کے والیانِ سلطنت غیرمسلم ہیں، وہاں عامة المسلمین نماز جمعہ وعیدین کے لیے کسی شخص کو امام و قاضی مقرر کرسکتے ہیں۔ عامة المسلمین کی طرف سے اس مقرر کردہ امام کے پیچھے جمعہ وعیدین کی نماز درست ہے: قال الشامي فلو الولاة کفارًا یجوز للمسلمین إقامة الجمعة ویصیر القاضي قاضیا بتراضي المسلمین ویجب علیم أن یلتمسو والیاً مسلما۔ (شامي:ج۱ ص۵۹۵)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند