• عبادات >> جمعہ و عیدین

    سوال نمبر: 604462

    عنوان:

    آبادی میں آنے والی عیدگاہ كا كیا حكم ہے؟

    سوال:

    کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام مسئلہ ذیل کے بارے میں شمالی دہلی میں گاؤں چاندن ہولہ کی عیدگاہ پہلے آبادی سے باہر تھی لیکن اب وہ عیدگاہ آبادی کے اندر آچکی ہے تو کیا اب بھی اس عیدگاہ کو مسنون عیدگاہ کہا جا سکتا ہے نیز کیا اب اس عیدگاہ اور بستی کی دیگر مساجد میں عید کی نماز ادا کرنا برابر یا اب بھی اس عیدگاہ کا وہی حکم ہے جو آبادی سے باہر والی عیدگاہ کا ہوتا ہے مسئلہ بالا کی وضاحت فرما کر عنداللہ ماجور ہوں۔

    جواب نمبر: 604462

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 1104-804/H=10/1442

     چاندن ہولہ (شمالی دہلی) کی عیدگاہ اگر آبادی میں آگئی ہے تو وہ بحکم جبّانہ اور صحراء نہ رہی پس، اس میں اور دیگر مساجد میں عید کی نماز اداء کرنا برابر ہے۔ تفصیل کے لئے ملاحظہ ہو فتاوی دارالعلوم مدلل: 5/195 ۔ نیز کتاب النوازل (از ص: 345 تا ص: 350 ، جلد پنجم)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند