• متفرقات >> اسلامی نام

    سوال نمبر: 60800

    عنوان: کچھ لوگ کہتے ہیں کہ بچوں کے نام کے انتخاب میں احتیاط کرو کیوں کہ اچھے اور برے نام کا اثر پڑتاہے

    سوال: (۱) کچھ لوگ کہتے ہیں کہ بچوں کے نام کے انتخاب میں احتیاط کرو کیوں کہ اچھے اور برے نام کا اثر پڑتاہے، کیا بات درست ہے؟ (۲) اللہ کے فضل سے میرا بیٹا ہوا ہے ، میں اس کا نام عمر(UMER ) رکھنا چاہوں گا ، کیا یہ اچھا اور درست نام ہے؟میری والدہ اس کانام ابراہیم (ibrahim ) رکھنا چاہتی ہیں، تو کس نام کو ترجیح دوں؟

    جواب نمبر: 60800

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 758-723/Sn=11/1436-U (۱) جی ہاں! بچوں کا اچھا نام رکھنا چاہیے، حدیث میں اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی ترغیب دی ہے، ابوداوٴد وغیرہ میں حضرت ابوالدرداء رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بہ روز قیامت تمھیں تمھارے اور تمھارے آباء (باپوں) کے نام کے ساتھ پکارا جائے گا؛ اس لیے ناموں کو اچھا رکھنے کا اہتمام کرو، عن أبي الدرداء قال: قال رسول اللہ -صلی اللہ علیہ وسلم-تُدْعَونَ یوم القیامة بأسمائکم وأسماء آبائکم، فأحسِنوا أسمائک (مشکاة المصابیح، ص: ۴۰۸، باب الأسامي، بہ حوالہ ابوداوٴد وسمند أحمد) (۲) دونوں نام اچھے ہیں، اگر آپ اپنی والدہ کے نام کو احتراماً ترجیح دیدیں تو اچھی بات ہے، نیز یہ ایک نبی کا نام ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند