• عقائد و ایمانیات >> اسلامی عقائد

    سوال نمبر: 62984

    عنوان: جب کوئی فوت ہوجاتاہے تو اس کے ورثہ کے علاوہ اگر کوئی اس کو ایصال ثواب پہنچانے کے لیے قرآن پاک کی تلاوت کرے تو اس مردے کو اس کا اجر ملتاہے کہ نہیں؟اگر کوئی یہ کہے کہ جب تک میں زندہ ہوں تو میری نیکیوں میں سے فلاں مردے کو بھی ثواب ملتا رہے تو اس بارے میں اسلام کیا کہتاہے؟

    سوال: جب کوئی فوت ہوجاتاہے تو اس کے ورثہ کے علاوہ اگر کوئی اس کو ایصال ثواب پہنچانے کے لیے قرآن پاک کی تلاوت کرے تو اس مردے کو اس کا اجر ملتاہے کہ نہیں؟اگر کوئی یہ کہے کہ جب تک میں زندہ ہوں تو میری نیکیوں میں سے فلاں مردے کو بھی ثواب ملتا رہے تو اس بارے میں اسلام کیا کہتاہے؟

    جواب نمبر: 6298401-Sep-2020 : تاریخ اشاعت

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 253-245/N=3/1437-U (۱): تلاوت قرآن پاک یا کسی بھی نیک عمل کا ثواب مرحوم یا زندہ کسی بھی شخص کو بخش سکتے ہیں، جس کو ثواب بخشا جائے اس کا ایصال ثواب کرنے والے کے عزیز واقارب یا خاندان وغیرہ سے ہونا ضروری نہیں الأصل أن کل من أتی بعبادة ما لہ جعل ثوابھا لغیرہ الخ (در مختار مع شامی ۴: ۱۰، ۱۱، مطبوعہ: مکتبہ زکریا دیوبند)، قولہ: ”لغیرہ“: أي: من الأحیاء والأموات۔ بحر عن البدائع، قلت: وشمل إطلاق الغیر النبيَّ صلی اللہ علیہ وسلم الخ (شامی)۔ (۲): اس میں کچھ حرج نہیں، جائز ہے، اور جس کے لیے اس نے اپنی نیکیوں میں ایصال ثواب کی نیت کی ہے، جب تک یہ زندہ رہے گا تو جو نیک اعمال کرے گا، ان سے اس مرحوم کو بھی ثواب پہنچتا رہے گا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند