• عقائد و ایمانیات >> اسلامی عقائد

    سوال نمبر: 605349

    عنوان:

    عامل كے پاس جانا كیسا ہے؟

    سوال:

    عامل کے پاس جانا شرعاً کیسا ہے ؟ کیا کسی عامل سے کسی شخص کے حوالے یہ معلومات لی جا سکتی ہیں کہ وہ جادوگر ہے ؟اور وہ اگر اس طرح کا کسی شخص کے حوالے سے یہ دعوی کرے یہ بہت اونچے درجے کا جادوگر ہے اور یہ ساری معلومات وہ استخارہ کے ذریعے سے حاصل کرے یا یہ دعوی کرے کہ اس کے پاس روحانی طور پر ایک بہت بڑا علم حاصل ہے جس کے بنیاد پر اس نے یہ معلوم کیا۔ کیا ایسا ممکن ہے ؟ ہماری مذہبی تعلیمات اس حوالے سے کیا کہتی ہیں۔ براہ کرم رہنمای فرمائی جائے

    جواب نمبر: 605349

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 1175-881/B=01/1443

     موجودہ دَور میں عملیات کرنے والے اکثر عامل کی عملیات کا دارومدار جنات اور شیاطین کے اوپر ہوتا ہے یہ لوگ ان کے تابع ہوتے ہیں، اور جنات و شیاطین کی زیادہ تر باتیں جھوٹی اور غلط ہوتی ہے، اس لئے ایسے عامل کے پاس نہیں جانا چاہئے، ان سے احتیاط کرنی چاہئے، ان سے کوئی بات معلوم کرنے کی ضرورت نہیں ہے، ان کے پاس روحانی علم نہیں ہوتا ہے؛ بلکہ شیطانی علم ہوتا ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند