• معاملات >> سود و انشورنس

    سوال نمبر: 605002

    عنوان:

    سود كے پیسے رفاہی كاموں میں لگانا درست ہے یا نہیں؟

    سوال:

    سو د کے پیسے کو کیا ہم عام راستے میں لگا سکتے ہیں یا صرف کسی گریب کو دے سکتے یا عام بیت الخلا میں یا قبرستان میں اسے لگا سکتے ہیں؟

    جواب نمبر: 605002

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:867-600/sd=11/1442

     سود کی رقم کا حکم یہ ہے کہ ثواب کی نیت کے بغیر فقراء مساکین پر صدقہ کردیا جائے ، اس رقم کو عام راستے یا عام بیت الخلاء میں لگانا درست نہیں ہے۔ لأن سبیل الکسب الخبیث التصدق إذا تعذر الرد علی صاحبہا (رد المحتار)۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند