• معاملات >> سود و انشورنس

    سوال نمبر: 602897

    عنوان:

    بینك سے قرض لے كر مكان بناكر بیچنا؟

    سوال:

    سوال یہ ہے کہ کوئی شخص بینک سے قرض۔ لون ۱۰۰۰۰۰۰ /لاکھ روپیہ لیکر گھربناتا ہے اور گھر بناکر فروخت کردیتا ہے پھر اس پیسے سے قسط وار قرض یعنی لون ادا کرتاہے تو کیا اس طرح لون لیکر گھر بنا کر فروخت کرنا صحیح ہے یا نہیں ایسا کام کرسکتے ہیں یا نہیں برائے مہربانی جواب دیکر شکریہ کا موقع مرحمت فرمائیں ممنون ومشکور رہوں گا۔

    جواب نمبر: 602897

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 474-406/M=06/1442

     جائز پیسے سے گھر بنانا اور بناکر نفع کے ساتھ بیچنا، ناجائز نہیں لیکن اس کام کے لیے بینک سے سودی لون لینا اور گھر بیچ کر سود بھرنا یہ غلط ہے، سود لینا اور دینا دونوں ناجائز فعل ہیں۔ حدیث میں سودی لین دین پر لعنت آئی ہے اس لیے مسلمان کو اس سے اجتناب لازم ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند