• معاملات >> سود و انشورنس

    سوال نمبر: 58314

    عنوان: اگر کوئی سونامول طے کرتے وقت یہ کہے کہ اس سونے کا دام (۹۰۰) ڈالر ہے ، تم نقد لو یا ادھار ، ایک ہی ہے ، تو اس طرح بیع کرنا جائز ہوگا یا ناجائز ؟ براہ کرم، قرآن وحدیث کی روشنی میں جواب دیں۔

    سوال: اگر کوئی سونامول طے کرتے وقت یہ کہے کہ اس سونے کا دام (۹۰۰) ڈالر ہے ، تم نقد لو یا ادھار ، ایک ہی ہے ، تو اس طرح بیع کرنا جائز ہوگا یا ناجائز ؟ براہ کرم، قرآن وحدیث کی روشنی میں جواب دیں۔

    جواب نمبر: 58314

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 372-337/Sn=6/1436-U بوقت فروخت مذکور فی السوال طریقے پر ”ایجاب“ کرنا شرعاً جائز ہے، اس میں کوئی حرج نہیں ہے؛ البتہ بیع اس وقت صحیح اور مکمل ہوگی جب مجلس عقد ہی میں ثمن یا مبیع میں سے کسی ایک پر قبضہ ہوجائے نیز نقد یا ادھار میں سے کوئی جہت متعین ہوجائے، اگر ادھار معاملہ طے پائے تو مجلس عقد ہی میں ادائیگی ثمن کی مدت کا متعین ہوجانا بھی ضروری ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند