• معاملات >> سود و انشورنس

    سوال نمبر: 148540

    عنوان: کرایہ کے گھر کے ڈپوزٹ کے لیے لون لینا کیسا ہے؟

    سوال: (۱) میری آفس میں پینشن اسکیم شروع ہوئی ہے جس میں ہم کچھ پیسہ جمع کرسکتے ہیں، نیشنل پینشن اسکیم، ایچ ڈی ایف سی بینک میں ہماری کمپنی کا تنخواہ کا اکاوٴنٹ ہے۔ کیا ہم پینشن میں اِنویسٹ کرسکتے ہیں؟ (۲) اسلام اور شریعت کے دائرے میں رہتے ہوئے ٹیکس کیسے بچایا جاسکتا ہے؟ (۳) ماں باپ کہتے ہیں کہ بیوی کو طلاق دیدو اور دوسری شادی کرلو، بیوی نے اپنی عمر چھپا کر شادی کی تھی جس کی وجہ سے ماں باپ تین سال سے ناراض ہیں، ایسی صورت میں میں کیا کروں؟ (۴) کرایہ کے گھر کا ڈپوزٹ (جمع کرنا) دینے کے لیے لون لینا کیسا ہے؟ (۵) آفس میں ٹارگیٹ جاب (محدود نوکری) ہے جس کی وجہ سے نماز کے لیے جانے میں دقت ہوتی ہے تو اس کے لیے کوئی دعا بتادیں۔ الحمدللہ سب نمازیں پڑھتا تھا ابھی شیڈیول (جَدول) کی وجہ سے نہیں پڑھ پاتا ہوں۔

    جواب نمبر: 148540

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 658-656/L=6/1438

    (۱) اگر آپ رقم (تنخواہ) قبضہ میں لینے کے بعد تنخواہ کا کچھ حصہ پنشن اسکیم میں انویسٹ کرتے ہیں تو ایسا کرنا جائز نہیں۔جمع کردہ رقم سے زائد ملنے والی رقم سود کہلائے گی، اور یہ معاملہ سودی ہوجائے گا۔

    (۲) غیر واجبی ٹیکس سے بچنے کے لیے ہراس طریقے کو اختیار کیا جاتا ہے جس میں صراحتاً جھوٹ یا دھوکہ دہی کی نوبت نہ آئے اس کے لیے آپ کسی مسلمان دین دار وکیل سے رابطہ کرسکتے ہیں۔

    (۳) اگر بیوی میں بظاہر کوئی خرابی نہیں ہے تو آپ کے والدین کو طلاق دلوانے پر مجبور نہ کرنا چاہیے، اگر وہ بلاوجہ طلاق دلوانے پر مجبور کریں تو اس میں ان کی اطاعت لازم نہیں آپ خود یا کسی بڑے سے کہہ دیں تاکہ وہ آپ کے والدین کو سمجھادیں ، طلاق اللہ رب العزت کے نزدیک مباح چیزوں میں سب سے مبغوض وناپسندیدہ ہے اس پر اقدام حد درجہ مجبوری میں کرنا چاہیے، طلاق کے بعد بسا اوقات دیگر مسائل بھی پیدا ہوجاتے ہیں۔

    (۴) اس مقصد کے لیے سودی قرض لینا جائز نہیں، قرآن وحدیث میں اس پر سخت وعید آئی ہے۔

    (۵) بس آپ ہمت کریں اور ذمہ دار کو خوش کرنے کی کوشش کریں اور یہ دعا پڑھتے رہیں رَبِّ اجْعَلْنِی مُقِیمَ الصَّلَاةِ وَمِنْ ذُرِّیَّتِی رَبَّنَا وَتَقَبَّلْ دُعَاءِ ان شاء اللہ راستے کھل جائیں گے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند