• عقائد و ایمانیات >> بدعات و رسوم

    سوال نمبر: 604214

    عنوان:

    کھانا سامنے رکھ کر (قرآن پڑھنا) فاتحہ كرنا؟

    سوال:

    کیا فرماتے ہیں علمائے دین و مفتیان شرع متین مسلہ ذیل میں کہ کچھ لوگ فاتحہ خوانی یا ایصالِ ثواب کے نام پر کھانے یا شیرینی کو سامنے رکھ کر تلاوتِ قرآن مجید کرنے کے بعد اللہ تعالٰی سے خیر و برکات کی دعا اور تلاوت کا ثواب فلاں فلاں شخص کو پہنچے جیسی آرزو بارگاہِ الٰہی میں کرتے ہیں تو کیا ان کا یہ طریقہ قرآن و حدیث سے ثابت جائز اور سنت ہے یا بدعات میں داخل ہے ۔برائے کرم تفصیل سے جواب مرحمت فرما عنداللہ ماجور ہوں۔

    جواب نمبر: 604214

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 738-604/D=09/1442

     شیرینی یا کھانا سامنے رکھ کر تلاوت قرآن وغیرہ کرکے ایصال ثواب کرنا شریعت سے ثابت نہیں۔

    غرباء و مساکین کو کھانا کھلانا باعث ثواب ہے لہٰذا یہ عمل علیحدہ کرکے ثواب پہونچنے کی نیت کرلی جائے۔

    اور قرآن شریف کی تلاوت استغفار درود علیحدہ ثواب کا عمل ہے یہ عمل کرکے جس کو چاہیں ثواب پہونچادیں اس وقت دعا کرنا اور جن لوگوں کو ثواب پہونچانا مقصود ہے ان کا نام لینا بھی جائز ہے۔

    قال فی الدر: الأصل أن کل من أتی بعبادة ما۔ لہ جعل ثوابہ لغیرہ ․․․․․

    قال الشامی: ای سواء کانت صلاة او صوما او صدقة او قرأة (الدر مع الرد: 2/256)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند