• معاملات >> وراثت ووصیت

    سوال نمبر: 608751

    عنوان:

    جو شخص باحیات ہے وہ اپنی جائداد کا خود مالک ہے اور اسے ہرطرح کے تصرف کا حق حاصل ہے؟

    سوال:

    سوال : ایک شخص کی کوئی اولاد نہیں، پھر اس شخص نے ایک لڑکے کو اپنایا (adopt) اور اس کی شادی بھی کی، اب اس کی وراثت کا حق دار کون ہے ؟ کیا اس شخص کے بھائی اس کی زمین خرید سکتے ہیں؟ اس شخص کی ایک بہن بھی ہے اور چار بھائی ہیں ، وہ شخص ابھی زندہ ہے ۔

    جواب نمبر: 608751

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 467-241/B-Mulhaqa=06/1443

     جب یہ شخص ابھی باحیات ہے تو اپنی جائداد کا وہ خود مالک ہے اور اس میں مالکانہ تصرف (بیع، ہبہ وغیرہ) کا حق رکھتا ہے، اگر یہ شخص اپنی زمین فروخت کرتا ہے تو اسے کوئی بھی خرید سکتا ہے، واضح رہے کہ لے پالک بیٹا پرورش کنندہ کا وارث نہیں ہوتا؛ لہٰذا صورت مسئولہ میں اس شخص کی وفات پر یہ لڑکا (لے پالک) وارث نہ ہوگا؛ بلکہ اس کی بیوی، والدین اور بھائی بہنیں حسب ضابطہ وارث ہوں گے، جب وفات ہو اس وقت باحیات اعزہ کی تفصیل لکھ کر حکم معلوم کرلیا جائے، واضح رہے کہ اگر یہ شخص زندگی میں اپنے لے پالک بیٹے کو کچھ دے کر مکمل قبضہ دخل کے ساتھ، اس کے حوالے کردے تو بیٹا (لے پالک) مالک ہوجائے گا، اس میں وراثت جاری نہ ہوگی، اسی طرح اگر کچھ وصیت کرجائے تو شرعی ضابطہ کے مطابق اس پر عمل کیا جائے گا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند