• معاملات >> وراثت ووصیت

    سوال نمبر: 31840

    عنوان: وراثت

    سوال: میرا سوال یہ ہے کہ میرے والدصاحب کا انتقال 1994میں ہوا تھا۔ ہم لوگ تین بھائی ایک بہن اورایک والدہ ہیں،میرے والدصاحب کے نام پر ایک گھر تھا جس کو ہم لوگوں نے بیچ دیا تھا اور اب ہم لوگ کرائے کے مکان میں رہتے ہیں مختلف جگہوں پر ۔ فرض کرلیں اس گھر سے ہمیں دو لاکھ روپئے ملے، براہ مہربانی اس رقم کی تقسیم کرنے میں میری مدد فرمائیں۔ اللہ تعالی آپ کو اس کا اجر عطا فرمائے۔ اگر آپ کو اس کے علاوہ مزید کوئی معلومات چاہیے تو مجھے آگاہ کریں۔

    جواب نمبر: 31840

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(د): 985=140-6/1432 صورت مسئولہ میں حقوق مقدمہ علی الارث کی ادائیگی کے بعد مرحوم کا ترکہ آٹھ حصوں میں منقسم ہوکر دو دو (2,2) حصے تینوں بیٹوں کو ایک حصہ بیٹی کو اور ایک حصہ بیوی کو ملے گا۔ قیمت مکان دو لاکھ ہونے کی صورت میں پچاس پچاس ہزار (50,000) تینوں بیٹوں کو پچیس ہزار (25,000) بیٹی کو اور پچیس ہزار (25,000) بیوی کو ملے گا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند