• معاملات >> وراثت ووصیت

    سوال نمبر: 24771

    عنوان: ایک شخص کا انتقال ہوا ، مرحوم کے پسماندگان میں ایک لڑکا ، عمر تقریبا ایک سال، ایک لڑکی جو مرحوم کی وفات سے چھ مہینے بعد پیداہوئی، دو بہنیں ، ایک بھائی اور ایک والدہ صاحبہ ہیں، مرحوم نے مکان وجائداد، خطیر رقم اور زیوارت چھوڑے ہیں۔ براہ کرم، ان وارثوں کے درمیان مرحوم کے ترکے کی تقسیم کس طرح کی جائے گی؟

    سوال: ایک شخص کا انتقال ہوا ، مرحوم کے پسماندگان میں ایک لڑکا ، عمر تقریبا ایک سال، ایک لڑکی جو مرحوم کی وفات سے چھ مہینے بعد پیداہوئی، دو بہنیں ، ایک بھائی اور ایک والدہ صاحبہ ہیں، مرحوم نے مکان وجائداد، خطیر رقم اور زیوارت چھوڑے ہیں۔ براہ کرم، ان وارثوں کے درمیان مرحوم کے ترکے کی تقسیم کس طرح کی جائے گی؟

    جواب نمبر: 24771

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(د): 1281=1061-10/1431

    صورت مسئولہ میں مرحوم کا کل ترکہ جائیداد نقد، زیورات اور اثاث البیت حقوق مقدمہ علی الارث مثل ادائیگی قرض وتنفیذ جائز وصیت کے بعد چوبیس (24)حصوں میں منقسم ہوگا۔ تین (3)حصہ والدہ کو، چودہ (14)حصہ لڑکے کو، سات (7)حصہ لڑکی کو (جو مرحوم کی وفات کے چھ ماہ بعد پیدا ہوئی) ملے گا، بہن بھائی مرحوم کے ترکہ سے محروم رہیں گے۔
    نوٹ: اگر مرحوم کی بیوی زندہ نہیں تھیں صرف والدہ تھیں یا بیوی اور والدہ دونوں زندہ تھیں تو اس کی صراحت کرکے حکم دوبارہ معلوم کریں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند