• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 66374

    عنوان: مسجد میں بغیر میٹر کے بجلی کا استعمال کیسا ہے؟

    سوال: مفتی صاحب، معلوم یہ کرنا ہے کہ ہم نے اپنے گاؤں کی مسجد کی بجلی قریبی لائن سے لگوائی ہے (مطلب میٹر نہیں لگوایا ہے ڈائریکٹ لائن سے کنکشن لیا ہے )، اور میٹر نہ لگوانے کی وجہ یہ ہے کہ ہمارے گاؤں کے لوگ زیادہ تر غریب ہے جو بل دینے کی طاقت نہیں رکھتے اور جو لوگ طاقت رکھتے ہیں وہ دین کے ساتھ مخلص نہیں ہے ، اس حال میں ہہمارے لئے ایسی بجلی استعمال کرنا کیسا ہے ? ناجائز ہے یا حرام? یا جائز? کیونکہ جب باہر سے کوئی آتا ہے تو وہ کہتے ہیں کہ تم لوگوں کی نہ نماز ہوتی ہے اور نہ تلاوت وغیرہ۔ برائے مہربانی راہنمائی فرما دیجئے ...شکریہ

    جواب نمبر: 66374

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 697-697/B=9/1437 میٹر نہ لگوانا یہ بجلی کی چوری ہے، چوری کسی خاص آدمی کی ہو یا سرکاری ہو بہرحال وہ چوری ہے، اسلام میں چوری بہت بڑا گناہ ہے اس سے بچنا چاہئے، ہمت کرکے میٹر لگوائیں اور اسی سے مسجد کا پنکھا، لائٹ وغیرہ جلائیں۔ محلہ والوں کے غریب ہونے سے چوری کرنا حلال نہ ہوگا۔ یہ فتوی پاکر پہلی فرصت میں میٹر کی درخواست دے کر میٹر لگوائیں۔ اور جائز طریقہ پر ہی بتی استعمال کریں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند