• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 64595

    عنوان: غلط بیانی کرکے وظیفہ جاری کرانا؟

    سوال: کیا یو ایس ایڈ اسکالرشپ لینا جائز ہے ؟ یہ ہمارے ملک میں یونیورسٹیوں کے ان طلبہ کو ملتاہے جو غریب ہوں، میں نے اپنی آمدنی کم بتا کر اس کے لیے درخواست دی تھی ، اب مجھے سالانہ 138000 روپئے مل رہے ہیں ، مجھے حرام کا خدشہ پیدا ہوگیاہے، میں نے مقامی مفتی صاحب سے پوچھا تو انہوں نے کہا کہ آپ یہ رقم لے کر مدرسوں اور غریبوں میں بانٹ دیا کریں ، خود نہ لیں ، چانچہ میں پچھلے سال سے یہی کررہا ہوں ، میں یو ایس ایڈ سے ملنے والی رقم جو کہ میری فیس کی مد میں یونیورسٹی کو دی جاتی ہے ، اتنی رقم گھر سے لے کر صدقہ کردیتاہوں اس نیت سے کہ یوایس ایڈ والے جن کو امداد دیتے ہیں وہ بالکل بھی یا رو مددگار نہیں ہوتے جب کہ میں بالکل غریبوں کو دیتاہوں۔ آپ سے یہ پوچھنا ہے کہ کیا میں یہ صحیح کررہا ہوں ؟ کہیں میں حرام کھانے والوں میں تو نہیں ہوں؟ حالانکہ میں اس رقم کے برابر صدقہ کردیتاہوں ۔ براہ کرم، رہنمائی فرمائیں۔

    جواب نمبر: 64595

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 828-989/SN=11/1437 مستحق نہ ہونے کے باوجود غلط بیانی سے جو آپ نے وظیفہ جاری کرایا، یہ آپ نے ایک ناجائز کام کیا، آپ درخواست دے کر وظیفہ بند کرادیں، اگر بند کرانے کی کوئی شکل نہ ہوتو غریبوں پر اتنی رقم صدقہ کردیا کریں اور ساتھ ساتھ اپنے اس ناجائز کام پر اللہ تعالی سے توبہ بھی کریں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند