• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 43192

    عنوان: گوشت کی تجارت

    سوال: زید کی گوشت کی فیکٹری ہے، اپنے کاروبار میں اس نے اپنے کچھ دوستوں کے پیسے لگائے ہیں، ان پیسوں سے جو بزنس ہوگا ، ہر مہینہ سارا خرچ نکالنے کے بعد جو منافع ہوگا اس کا کچھ فیصد زید ان دوستوں کو دے گا، یہ فیصد ہر مہینہ متعین نہیں ہوگا بلکہ نفع کے حساب سے ہوگا، کبھی تین فیصد، کبھی دو فیصد ، کبھی چار فیصد ،تو کیا ایسا کاروبار کرنا جائز ہے؟اس میں کسی طرح کا سود تو نہیں ہے؟وضاحت فرمائیں۔

    جواب نمبر: 43192

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 136-99/D=2/1434 کاروبار کی تفصیلات سب شرکاء کے سامنے واضح ہوکر صاف صاف طے ہو، ہرشریک کا نفع مقررہ فیصد کے اعتبار سے طے ہو کبھی 2% کبھی 3% یہ جائز نہیں، جب کاروبار میں نفع کم ہوگا تو لازمی طور پر شریک کو بھی کم ملے گا،ا ب فیصد کم کرنے کی کیا ضرورت؟ اس طرح طے کرنے سے شرکت ناجائز ہوجائے گی اور نفع جائز نہ ہوگا۔ دوسری بات یہ کہ نقصان ہونے کی صورت میں کیا طے ہے، اس کی وضاحت آپ نے نہیں کی۔ نفع کی حد تک صرف نقصان ہوا (یعنی بالکل نفع نہیں ہوا) یا اصل پونجی پر بھی اثر انداز ہوگیا (یعنی اصل پونجی کا کچھ حصہ بھی نقصان میں چلا گیا) ایسی صورت کے لیے کیا معاملہ طے ہوا ہے؟


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند