• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 37581

    عنوان: گروی مال کا استعمال میں لیا جانا

    سوال: ایک شخص نے کسی سے ادھار مال لیا اور کسی وجہ سے اس مال کی قیمت نہیں ادا کرسکا- اور بقایہ دار نے اپنے مال کے بدلے اس کی زمین کے کاغذات کو دھوکہ سے لیکر اسے کسی تیسرے شخص کے یہاں اپنے پیسے کے بدلے گروی رکھ دیا - اور تب سے اب تک اس زمین کی پیداوار اور دیگر سامان کو وہ تیسرا شخص اپنے استعمال میں لیتا چلا آرہا ہے- اور اس زمین کے وارثوں پر اپنے رسوخ والے لوگوں سے اس زمین سے دستبردار ہونے کے لئے زبردستی دباؤ ڈلوا رہا ہے۔ اس مسئلہ میں شریعت مطہرہ کا کیا حکم ہے تفصیل سے بتائیں۔

    جواب نمبر: 37581

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 586-301/L=4/1433 صورت مسئولہ میں بقایا دار شخص کو اپنی رقم کے مطالبہ کا حق ہوگا، بقایا دار کا رقم ادا نہ کرنے کی وجہ سے زمین کے کاغذات کو دھوکہ سے لے کر اسے کسی تیسرے شخص کے یہاں اپنے پیسے کے بدلے گروی رکھ دینا، اور اس شخص کا اس زمین کی پیداوار سے فائدہ اٹھانا، نیز اس زمین کے وارثوں پر اپنے رسوخ والے لوگوں سے اس زمین سے دستبردار ہونے کے لیے زبردستی دباوٴ ڈلوانا شرعاً ناجائز ہے، ایسے شخص کو اپنے ان افعالِ قبیحہ سے توبہ واستغفار کرنا چاہیے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند