• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 32448

    عنوان: اگر میں کسی دوسرے سے رقم مانگوں تو کیا وہ رشوت ہوجاتی ہے؟

    سوال: میں یہ پوچھنا چاہتاہوں میں جس آفس میں کام کرتاہوں وہاں پر مجھے ٹھیکدار اپنے آپ ہی اپنی خوشی سے (جب ادائیگی ہوتی ہے) تو 200/ یا 300/ روپئے دے کر چلے جاتے ہیں جب کہ میں ان سے مانگتا نہیں ہوں تو کیا وہ روشوت ہے؟(۱) اس صورت میں کیا میں ان سے رقم لے سکتا ہوں جب کہ وہ اپنے آپ ہی دیتے ہیں ، میں نہیں مانگتا ہوں؟ (۲) اگر میں کسی دوسرے سے رقم مانگوں تو کیا وہ رشوت ہوجاتی ہے؟

    جواب نمبر: 32448

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(ب): 888=738-7/1432 اگر آپ اس ٹھیکیدار کے غلط کام میں معاون نہیں بنتے ہیں تو ایسی صورت میں اگر وہ اپنی خوشی سے کچھ پیسے آپ کو بطور ہدیہ دے تو اسے لینے میں کوئی مضائقہ نہیں۔ یہ رشوت نہیں ہے۔ (۲) جب آپ کو اپنے کام کا پورا محنتانہ یعنی آفس سے تنخواہ ملتی ہے تو مزید کسی سے کچھ مانگنا جائز نہیں۔ یہ رشوت میں شمار ہوگا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند