• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 21797

    عنوان:

    مفتی صاحب چند مسائل پوچھنا چاہوں گا: (۱)کچھ اسلامی مہینوں کے شروع ہونے پر کچھ لوگ ایس ایم ایس کرتے ہیں کہ ایک حدیث میں ہے کہ جو کوئی کسی کو فلاں مہینے (مثلاً رجب) کی آمد کی خبر دے گا وہ جنت میں جائے گا۔ کیا ایسی کوئی حدیث ہے؟ (۲)کچھ لوگ ایس ایم ایس میں درود شریف لکھ کر بھیجتے ہیں اور کہتے ہیں کہ تین بار درود پڑھ کر ایس ایم ایس آگے بھیج دو، یہ صدقہ جاریہ ہوگا۔ اسی طرح کچھ ایس ایم ایس میں اللہ کے نا م ہوتے ہیں اور کچھ ایس ایم ایس دعائیں ہوتی ہیں۔ تو کیا ایسے ایس ایم ایس کو آگے بھیجنے سے صدقہ جاریہ ملے گا؟ کیا پتہ کہ جس کو ایس ایم ایس بھیج رہے ہیں وہ کس حالت میں ہوگا، ہو سکتا ہے وہ باتھ روم میں ہو او روہاں ہی موبائل کھول کر ایس ایم ایس پڑھ لے، اس سے قرآنی آیات اور حدیث کی بے ادبی کا بھی اندیشہ ہے۔

    سوال:

    مفتی صاحب چند مسائل پوچھنا چاہوں گا: (۱)کچھ اسلامی مہینوں کے شروع ہونے پر کچھ لوگ ایس ایم ایس کرتے ہیں کہ ایک حدیث میں ہے کہ جو کوئی کسی کو فلاں مہینے (مثلاً رجب) کی آمد کی خبر دے گا وہ جنت میں جائے گا۔ کیا ایسی کوئی حدیث ہے؟ (۲)کچھ لوگ ایس ایم ایس میں درود شریف لکھ کر بھیجتے ہیں اور کہتے ہیں کہ تین بار درود پڑھ کر ایس ایم ایس آگے بھیج دو، یہ صدقہ جاریہ ہوگا۔ اسی طرح کچھ ایس ایم ایس میں اللہ کے نا م ہوتے ہیں اور کچھ ایس ایم ایس دعائیں ہوتی ہیں۔ تو کیا ایسے ایس ایم ایس کو آگے بھیجنے سے صدقہ جاریہ ملے گا؟ کیا پتہ کہ جس کو ایس ایم ایس بھیج رہے ہیں وہ کس حالت میں ہوگا، ہو سکتا ہے وہ باتھ روم میں ہو او روہاں ہی موبائل کھول کر ایس ایم ایس پڑھ لے، اس سے قرآنی آیات اور حدیث کی بے ادبی کا بھی اندیشہ ہے۔

    جواب نمبر: 21797

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(ل): 780=569-5/1431

     

    (۱) ایسی کوئی حدیث میری نظر سے نہیں گذری ہے۔

    (۲) موبائل پر درود شریف، دعائیں، قرآنی آیات وغیرہ لکھ کر ایس ایم ایس کرنا مناسب نہیں اس میں بے ادبی کا اندیشہ ہے۔ مذکورہ بالا چیزوں کو لکھ کر ایس ایم ایس کرنے کو صدقہ جاریہ کہنا صحیح نہیں ہاں اگر کوئی ایس ایم ایس پڑھ کر اس کے مطابق عمل کرتا ہے تو الدال علی الخیر کفاعلہ کے بموجب اس کو بھی ثواب ملے گا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند