• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 173308

    عنوان: حج کا رکن ادا کرنے سے پہلے كچھ لوگ پکڑلیے گئے اور حج کرنے سے روک دیئے گئے ان كے بارے میں كیا حكم ہے؟

    سوال: یہاں سعودی عرب سے کچھ لوگ حج کے لئے(الریاض) سے گئے تھے میقات(طائف) سے عمرے کا احرام نہیں باندھا ،بغیر احرام کے مکہ چلے گئے ،مسجد عائشہ سے احرام باندھ لیا اور عمرہ کرلیا ۔ 8 ذوالحجة کو مکہ سے حج کا احرام باندھ کر منی روانہ ہوگئے ،راستے میں پولیس والوں نے پکڑ لیا احرام کھلوا کر واپس الریاض بھیج دیا ۔ حج کا کوئی بھی رکن ادا نہ کر سکے ،ان حضرات کے لئے شرعا کیا حکم ہے؟

    جواب نمبر: 173308

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 56-232/M=03/1441

    صورت مسئولہ میں ان لوگوں پر میقات سے بغیر احرام کے گذرنے کی وجہ سے ایک دم واجب ہے پھر حج کا احرام باندھ کر حج کا رکن ادا کرنے سے پہلے جو پکڑے گئے اور حج کرنے سے روک دیئے گئے تو وہ محصر ہوگئے اِس صورت میں اگر انہوں نے احرام کھولنے سے پہلے حدود حرام میں قربانی کروادی تھی اور اس کے بعد احرام کھولا تھا تو آئندہ محض ایک حج اور ایک عمرے کی قضاء کافی ہے مزید کوئی دم واجب نہیں اور اگر حدود حرم میں قربانی کرائے بغیراحرام کھول دیا تھا تو آئندہ اُن پر ایک حج، ایک عمرہ اور ایک دم کفارہ بھی لازم ہیں۔ إذا أحصر بعدوّ أو مرض ․․․․․․ بعث المفرد دماً أو قیمتہ ․․․․․ والقارن دمین ․․․․․ ویجب علیہ إن حل من حجة ولو نفلاً حجة بالشروع وعمرة للتحلیل الخ (درمختار اشرفی: ۴/۷)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند