• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 15383

    عنوان:

    سعودی عرب کی گورنمنٹ شریعة کمیٹی کے مطابق قسطوں پر کار خریدنا جائز ہے۔ میں یہ جاننا چاہتاہوں کہ امام ابوحنیفہ رحمة اللہ علیہ کے مطابق قسطوں پر کار خریدناجائز ہے یا نہیں، جب کہ کار فروخت کرنے والا نقد خریدنے کے بالمقابل اس صورت میں زیادہ پیسہ لے رہا ہے؟

    سوال:

    سعودی عرب کی گورنمنٹ شریعة کمیٹی کے مطابق قسطوں پر کار خریدنا جائز ہے۔ میں یہ جاننا چاہتاہوں کہ امام ابوحنیفہ رحمة اللہ علیہ کے مطابق قسطوں پر کار خریدناجائز ہے یا نہیں، جب کہ کار فروخت کرنے والا نقد خریدنے کے بالمقابل اس صورت میں زیادہ پیسہ لے رہا ہے؟

    جواب نمبر: 15383

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1426=1358/ب

     

    قسطوں پر کار کی خریداری جائز ہے، بشرطیکہ اس میں سود دینے کا مسئلہ نہ ہو۔ ویسے نقد میں کم او راُدھار میں زیادہ پیسے لینا شرعاً جائز ہے، قسطوں پر خریدنے کے لیے سود سے بچنے کی ترکیب یہ ہے کہ کار کی قیمت قسطوں پر ادائیگی، یہ سارے مجموعے کو کار کی قیمت قرار دے کر اسی مجموعی قیمت میں خریدیں یعنی آپ بینک والے سے کہہ دیں کہ ہم اتنی قیمت میں کار خریدرہے ہیں، پھر قسط وار وہ قیمت ادا کرتے رہیں۔ تو یہ صورت بے غبار جائز اور صحیح ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند