• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 13701

    عنوان:

    میں ایک نوکری کرنے جارہا ہوں ۔اب آپ مجھے یہ بتائیں کہ نوکری کا دین کیا ہے، اور میں وہاں کس طرح نوکری کروں؟ جیسے کہ صحابہ کے زمانہ میں ایک صحابی نے دکان کھولی تو ان سے کسی نے کہا کہ تم نے دکان کا دین سیکھا ہے؟ انھوں نے کہا نہیں سیکھا۔ تو ان سے کہا گیا کہ پہلے مسجد جاکر دکان کا دین سیکھ کر آؤ پھر دکان شروع کرنا ۔ اس لیے آپ مجھے نوکری کا دین بتادیں؟

    سوال:

    میں ایک نوکری کرنے جارہا ہوں ۔اب آپ مجھے یہ بتائیں کہ نوکری کا دین کیا ہے، اور میں وہاں کس طرح نوکری کروں؟ جیسے کہ صحابہ کے زمانہ میں ایک صحابی نے دکان کھولی تو ان سے کسی نے کہا کہ تم نے دکان کا دین سیکھا ہے؟ انھوں نے کہا نہیں سیکھا۔ تو ان سے کہا گیا کہ پہلے مسجد جاکر دکان کا دین سیکھ کر آؤ پھر دکان شروع کرنا ۔ اس لیے آپ مجھے نوکری کا دین بتادیں؟

    جواب نمبر: 13701

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 993=937/ب

     

    کسی عالم دین کے پاس جاکر سیکھیں کہ دین داری اور دیانت داری کیا ہے؟ کس طرح سے ہم کام کریں گے تو حلال ہوگا اور کس طرح کام کرنے سے حرام ہوگا؟ کام کا جو ٹائم آپ کو دیا گیا ہے اس کی پابندی کریں۔ جو کام کرنے کو ملا ہے پہلے یہ دیکھیں یہ کام شریعت اسلام میں کرنا حلال ہے یا حرام ہے؟ وہ کام حلال اور جائز ہے تو اس کام کو پوری دیانت داری کے ساتھ کریں، دوکان کریں تو تجارت کے مسائل علمائے کرام سے پوچھ پوچھ کر کریں، یہی نوکری اور دکان کا بھی ہے۔ بہرحال علمائے حق کا دامن پکڑے رہیں اور ان کی جوتیاں سیدھی کرتے رہیں، ان کی صحبت میں بیٹھتے رہیں، ہرچیز کی معلومات ہوتی رہے گی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند