• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 12006

    عنوان:

    یوزک کے بارے میں کوئی واضح آیت یا حدیث بتائیں۔ میں تو اشارے سے بھی مطمئن ہوں مگر وہ مسلمان بھائی جو اس بات پر بضد ہیں کہ قرآن و حدیث میں کہیں واضح طور پر میوزک کو منع نہیں کیا گیا۔ میں دراصل ایسے کچھ بھائیوں کو سمجھانا چاہتاہوں مگر میرے پاس علم بھی نہیں اور کوئی واضح آیت اور حدیث بھی نہیں۔ دوسری طرف چند آیت اور حدیث ہیں مگر ان سے بھی مطلب واضح نہیں ہوتا جیسے آپ ہی کے ایک فتوے میں آیت او رحدیث لکھی ہیں۔ اگر میرا سوال آپ کو سمجھ میں نہ آئے تو میوزک کی حرمت کے بارے میں ایک واضح حدیث اور آیت تحریر کردیں۔

    سوال:

    یوزک کے بارے میں کوئی واضح آیت یا حدیث بتائیں۔ میں تو اشارے سے بھی مطمئن ہوں مگر وہ مسلمان بھائی جو اس بات پر بضد ہیں کہ قرآن و حدیث میں کہیں واضح طور پر میوزک کو منع نہیں کیا گیا۔ میں دراصل ایسے کچھ بھائیوں کو سمجھانا چاہتاہوں مگر میرے پاس علم بھی نہیں اور کوئی واضح آیت اور حدیث بھی نہیں۔ دوسری طرف چند آیت اور حدیث ہیں مگر ان سے بھی مطلب واضح نہیں ہوتا جیسے آپ ہی کے ایک فتوے میں آیت او رحدیث لکھی ہیں۔ اگر میرا سوال آپ کو سمجھ میں نہ آئے تو میوزک کی حرمت کے بارے میں ایک واضح حدیث اور آیت تحریر کردیں۔

    جواب نمبر: 12006

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 658=466/ل

     

    قرآن شریف میں ہے: وَمِنَ النَّاسِ مَنْ یَّشْتَرِیْ لَھْوَ الْحَدِیْثِ․․․ (الآیة) ترجمہ: اور ایک وہ لوگ ہیں جو خریدار ہیں کھیل کی باتوں کے (سورہٴ لقمان) لہو الحدیث کی تفسیر عبد اللہ بن مسعود، عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما وغیرہ نے گانے بجانے سے کی ہے اور قرآن کریم کی ایک دوسری آیت لاَ یِشْھَدُوْنَ الزُّوْرَ میں امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ اور مجاہد اور محمد بن الحنفیہ وغیرہ نے زور کی تفسیر غنا (گانے بجانے) سے کی ہے۔ نیز حدیث شریف میں حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے شراب اور جوئے اور طبلہ اور سارنگی کو حرام کیا ہے اور فرمایا کہ ہرنشہ والی چیز حرام ہے (رواہ ابوداوٴد، وابن ماجہ، وابن حبان) ایک حدیث میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا راگ و گانا دل میں نفاق کو اس طرح پیدا کرتا ہے جس طرح پانی کھیتی کو اگاتا ہے (مشکاة شریف) اور فتاویٰ قاضی خان میں ہے: استماع الملاھی معصیة والجلوس علیھا فسق والتلذذ بھا من الکفر، باجوں کا سننا گنا ہیا، اس پر بیٹھنا فسق ہے اور اس سے لذت حاصل کرنا کفریات میں سے ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند