• متفرقات >> حلال و حرام

    سوال نمبر: 10287

    عنوان:

    کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام مسئلہ مندرجہ ذیل کے بارے میں ایسے دو مسلمان شخص لڑکا اور لڑکی جو گھر سے بھاگنے کے بعد کورٹ میرج کراکر بغیر کسی خاص سرپرست کے آپس میں نکاح کرنا چاہیں تو کیا شرعی اعتبار سے وکیل گواہ بناکر ان کا نکاح پڑھانا درست ہے یا نہیں؟

    سوال:

    کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام مسئلہ مندرجہ ذیل کے بارے میں ایسے دو مسلمان شخص لڑکا اور لڑکی جو گھر سے بھاگنے کے بعد کورٹ میرج کراکر بغیر کسی خاص سرپرست کے آپس میں نکاح کرنا چاہیں تو کیا شرعی اعتبار سے وکیل گواہ بناکر ان کا نکاح پڑھانا درست ہے یا نہیں؟

    جواب نمبر: 10287

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 93=93/ م

     

    جو لڑکا اور لڑکی گھر سے بھاگ کر بذریعہ کورٹ میرج کرنا چاہتے ہیں، ان کی عمر کیا ہے؟ اوراپنے خاص سرپرست کو بتلائے بغیر یا ان کی اجازت ورضا مندی حاصل کیے بغیر دونوں (لڑکا، لڑکی) کے نکاح پر اقدام کے اسباب و وجوہات کیا ہیں؟


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند