• عبادات >> حج وعمرہ

    سوال نمبر: 1210

    عنوان:

    اگر کوئی شخص عمرہ مکمل کرنے کے بعد مزید طواف کرنا چاہے تو اس کو احرام اتار دینا چاہیے؟ نیز، کیا یہ ضروری ہے کہ مسجد عائشہ (رضی اللہ عنہا) جا کر دوبارہ احرام باندھے؟ کیا اس سلسلے میں کوئی حدیث ہے کہ میقات (مسجد عائشہ) جانا ضروری ہے؟

    سوال:

    اگر کوئی شخص عمرہ مکمل کرنے کے بعد مزید طواف کرنا چاہے تو اس کو احرام اتار دینا چاہیے؟

    نیز، کیا یہ ضروری ہے کہ مسجد عائشہ (رضی اللہ عنہا) جا کر دوبارہ احرام باندھے؟

    کیا اس سلسلے میں کوئی حدیث ہے کہ میقات (مسجد عائشہ) جانا ضروری ہے؟

    جواب نمبر: 1210

    بسم الله الرحمن الرحيم

    (فتوى: 364/د = 360/د)

     

    (۱) عمرہ کے افعال میں سے حلق بھی ہے جس کے ذریعہ آدمی احرام سے باہر ہوتا ہے اور اس کے افعالِ عمرہ پورے ہوتے ہیں، لہٰذا حلق کراکر عمرہ پورا کرنے کے بعد ہی مزید طواف کرنا چاہیے، حلق کے بعد کپڑے تبدیل کرنا ضروری نہیں۔ احرام والی دونوں چادریں پہنے پہنے بھی طواف کرسکتے ہیں۔

    (۲) دوسرا عمرہ کرنے کے لیے دوبارہ احرام باندھنے کے واسطے مسجد عائشہ جانا ضروری ہے۔ کیونکہ جو آفاقی مکہ مکرمہ میں کسی شرعی طریقہ سے آیا ہو وہ مکی کے حکم میں ہوجاتا ہے اور اہل مکہ کا احرام عمرہ کے واسطے حِل ہے اور حِل کی سب سے قریبی جگہ تنعیم ہے (جس کو مسجد عائشہ بھی کہتے ہیں) خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کو ان کے بھائی عبدالرحمن -رضی اللہ عنہ- کے ہمراہ اسی مقام پر بھیج کر احرام باندھنے کا حکم دیا تھا۔ مشکوٰة کی طویل حدیث جس کو امام بخاری اور امام مسلم نے روایت کیا ہے اس کا ایک حصہ یہ ہے بعث معي عبد الرحمن بن أبي بکر وأمرني أن اعتمر مکان عمرتي من التنعیم (الحدیث) مشکوٰة: ج۱ ص۲۲۵)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند