• عقائد و ایمانیات >> حدیث و سنت

    سوال نمبر: 602716

    عنوان:

    قیامت کی چھ نشانیوں كے بارے میں

    سوال:

    کتاب الفتن میں ایک حدیث پاک مذکور ہے ابن عینیہ، صفوان بن سلیم رح سے نقل کرتے ہیں اور انھوں نے حضرت عوف بن مالک رض سے روایت کی کہ حضرت عوف بن مالک رض فرماتے ہیں کہ رسول صلی اللہ علیہ دسلم نے ارشاد فرمایا کہ قیامت سے پہلے چھ علامتیں ہوں گی ان میں سب سے پہلے تمہارے نبی صلی اللہ علیہ دسلم کی وفات ہو گی اور بیت المقدس کی فتح ہو گی، اور بکری کے سینے کی بیماری کی طرح موت ہو گی اور صلح ہوگی تمہارے اور رومیوں کے درمیان، اور کفر کا شہر کھل جاے َ گااور ایک آدمی سو دینار کو کم سمجھ کر واپس کر دے گا۔ ۱۔حضرت پوچھنا یہ ہے کہ کیا یہ صحیح حدیث شریف ہے ؟ ۲۔ بکری کے سینے کی بیماری اگر کرونا ہو"بکریوں سے پھیلی ہوئی بیماری ہے کرونا انٹرنیٹ کے مطابق" اور کفر کا شہر کھل جاے َ گا سے مراد اسرائیل کو تسلیم کرنا جو شروع ہوا ہے وہ ہو تو کیا ایسا سمجھنا مناسب ہے ؟ اگرچہ ان نشانیوں سے کوئی خاص چیز متعین کرنے کو علماء منع فرماتے ہیں مگر پھر ان نشانیوں کو بتانے کا کوئی مقصد بھی توکچھ ہو گا۔ برائے مہربانی جواب عنایت فرمائیں۔ جزاک اللہ

    جواب نمبر: 602716

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 592-486/H=07/1442

     بروایت بخاری مشکاة شریف، ص: 466 کے باب الملاحم میں یہ حدیث ہے بحوالہٴ مرقاة حاشیہ میں قدرے تفصیل ہے۔ آپ نے جو کچھ مطلب تحریر فرمایا ہے ہمیں اس کی تائید کہیں مل نہیں سکی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند