• عقائد و ایمانیات >> حدیث و سنت

    سوال نمبر: 48098

    عنوان: حسن، ضعیف ، موضوع کے معنی کیا ہے؟

    سوال: حسن، ضعیف ، موضوع کے معنی کیا ہے؟ اور حسن حدیث ، ضعیف حدیث ، صحیح حدیث ، موضوع حدیث ، من گھڑت حدیث کسے کہتے ہیں؟ ان کی تعریف ہوسکے تو آسان لفظوں میں تفصیل کے ساتھ بتائیں۔ جزاک اللہ

    جواب نمبر: 48098

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 1505-498/L=12/1434-U (۱) حسن بمعنی خوبصورتی، عمدگی، اور اصطلاحِ محدثین میں حدیث حسن: وہ حدیث ہے جس کی سند میں درمیان سے کوئی راوی نہ چھوٹا ہو بلکہ وہ حدیث واسطہ در واسطہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم تک متصل ہو اور اس کے تمام راوی ثقہ یعنی معتبر ومعتمد اور عادل ہوں، مگر اُن میں سے ایک یا متعدد راویوں کی حفظ ویاد داشت میں کچھ کمی ہو، نیز اس حدیث کا کوئی راوی حدیث کا کوئی راوی حدیث بیانی میں اپنے سے زیادہ قوی ومعتمد راوی کی مخالفت بھی نہ کرتا ہو اور نہ ہی اس حدیث میں کوئی ایسا مخفی عیب ہو جس سے اس حدیث کی صحت پر اثر پڑ رہا ہو: الحسن لغة: ہو صفة مشبہة من الحسن بمعنی الجمال واصطلاحا․․․ تعریفہ المختار ہو ما اتصل سندہ بنقل العدل الذي خف ضبطہ عن مثلہ إلی منتہاہ من غیر شذوذ ولا علة (تیسیر مصطلح الحدیث: ۴۶ اتحاد) (۲) ضعیف بمعنی نحیف وکمزور: اور اصطلاح محدثین میں حدیث ضعیف ہروہ حدیث ہے جس میں سابق میں بیان کردہ حدیث حسن کے تمام یا بعض شرائط مفقود ہورہے ہوں مثلاً حدیث حسن میں ایک شرط ہے اتصالِ سند (درمیان سے کسی راوی کا نہ چھوٹنا) لہٰذا جس حدیث کی سند متصل نہ ہو وہ حدیث عند المحدثین ضعیف کہلاتی ہے: الضعیف لغة ضد القوي․․․ اصطلاحا ہو ما لم یجمع صفة الحسن بفقد شرط من شروطہ (تیسیر مصطلح الحدیث: ۶۳، اتحاد) (۳) موضوع: گھٹیا من گھڑت: اور اصطلاح محدثین میں حدیث موضوع: وہ روایت ہے جو واقع میں حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث نہ ہو بلکہ راوی نے عمدا گھڑکر (کذب بیانی کرتے ہوئے) آپ علیہ السلام کی طرف نسبت کرلیا ہو: الموضوع لغة: اسم مفعول من وضع الشيء أي حطّہ ․․․ اصطلاحا ہو الکذب المختلق المصنوع المنسوب إلی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم․ (تیسیر مصطلح الحدیث: ۸۹، اتحاد) نوٹ: حدیث موضوع ہی کو اردو میں ”من گھڑت حدیث“ کہتے ہیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند