• عقائد و ایمانیات >> حدیث و سنت

    سوال نمبر: 46014

    عنوان: کیا یہ حدیث ہے؟

    سوال: کیا یہ حدیث ہے؟ مفہوم ہے کہ میری امت کا ایک گروہ رات بھر کھانے پینے ، کھیل اور مستی میں مصروف رہے گا جب صبح ہوگی تو وہ بندر اور خنزیر بن چکے ہوں گے ، پھر ان کے محلوں پر ایک ہوا بھیجی جائے گی جو انہیں بکھیر کر رکھ دے گی جیسے پہلے لوگوں کو بکھیر کر رکھ دیا تھا ، کیوں کہ وہ شراب کو حلال سمجھتے ہوں گے ، میوزک کے آلات بجتے ہوں گے اور گانے والی عورتیں رکھے ہوں گے؟(مسند احمد ، حدیث، 22285 جلدپانچ ، صفحہ 259 ، مسند الانصار العنوان ، ابو حمزہ رضی اللہ عنہ کی رایت )

    جواب نمبر: 46014

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1195-1093/N=10/1434 جی ہاں! یہ حدیث البتہ اس کی تمام اسانید میں ضعف ہے کیونکہ مدار سند فرقدبن یعقوب سنجی ہے جو محدثین کے نزدیک ضعیف ہے، اور حدیث کا جو ترجمہ آپ نے نقل کیا ہے اس میں غلطی بھی ہے، ”ان محلوں“ کے بجائے صحیح ترجمہ یہ ہے: ”ان کے قبیلوں میں سے چند قبیلوں پر“ کیونکہ حدیث کے الفاظ ہیں: ”علی أحیاء من أحیاء ہم“ البتہ بعض صحیح روایات سے اس کے مضمون کی -کچھ فرق کے ساتھ-تائید ہوتی ہے۔ (دیکھئے: مسند احمد بتحقیق شعیب الارنوٴوط ۳۶: ۵۶۴، ۵۶۵ اور اس کا حاشیہ)۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند