• معاشرت >> ماکولات ومشروبات

    سوال نمبر: 15228

    عنوان:

    کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام و علمائے عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ہمارے یہاں فجی میں گائے کا مذبح خانہ حکومت کے تحت چلتاہے۔ اسی مذبح خانے میں خنزیر بھی کاٹا جاتا ہے، لیکن دونوں (گائے اور خنزیر) کے ذبح کرنے کی جگہیں علیحدہ علیحدہ ہیں۔ مسلمانوں کی کوشش سے وہاں مسلم ذابح متعین کیا گیا ہے جو گائے اوربیل ذبح کرتاہے۔ گائے کا گوشت الگ او رخنزیر کا گوشت الگ برف خانے میں رکھا جاتاہے۔ سپلائی اور ڈلیوری کے وقت بعض اوقات ایک ہی فریزر ٹرک میں دونوں کا گوشت یعنی گائے اور خنزیرکا ڈال دیا جاتاہے جس سے آپس میں لگنے کا خدشہ رہتاہے۔سوال یہ ہے کہ: اگر خنزیر کا گوشت کسی حلال گوشت سے لگ جائے تو حلال گوشت کا کیا حکم ہے؟ (۲)اگر نجس ہو تو طریقہ طہارت کیا ہے؟

    سوال:

    کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام و علمائے عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ہمارے یہاں فجی میں گائے کا مذبح خانہ حکومت کے تحت چلتاہے۔ اسی مذبح خانے میں خنزیر بھی کاٹا جاتا ہے، لیکن دونوں (گائے اور خنزیر) کے ذبح کرنے کی جگہیں علیحدہ علیحدہ ہیں۔ مسلمانوں کی کوشش سے وہاں مسلم ذابح متعین کیا گیا ہے جو گائے اوربیل ذبح کرتاہے۔ گائے کا گوشت الگ او رخنزیر کا گوشت الگ برف خانے میں رکھا جاتاہے۔ سپلائی اور ڈلیوری کے وقت بعض اوقات ایک ہی فریزر ٹرک میں دونوں کا گوشت یعنی گائے اور خنزیرکا ڈال دیا جاتاہے جس سے آپس میں لگنے کا خدشہ رہتاہے۔سوال یہ ہے کہ: اگر خنزیر کا گوشت کسی حلال گوشت سے لگ جائے تو حلال گوشت کا کیا حکم ہے؟ (۲)اگر نجس ہو تو طریقہ طہارت کیا ہے؟

    جواب نمبر: 15228

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1439=1165/1430/ل

     

    گوشت لگ جانے سے مراد اگر چھوجانا ہے، تو حلال گوشت اچھی طرح دھوکر کھاسکتے ہیں اور اگر لگ جانے سے مراد مل جانا ہے تو پھر اس صورت میں کھانا جائز نہیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند