• عبادات >> احکام میت

    سوال نمبر: 28695

    عنوان: اگر کسی عورت کا شوہر مرجائے تو وہ عورت عدت کہاں گذارے گی؟ کیا شوہر کے گھر پر ہی عدت گذارنا ضروری ہے؟یا وہ آزاد ہے جہاں چاہئے تو عدت گذارے؟ چاہئے میکے میں، چاہئے بھائی کے گھر میں، چاہئے شوہر کے گھر؟
     اور اگر مرد کا انتقال ہوجائے ، اب اس کو پچاس کلو میٹر دورکہیں رشتہ دار کے یہاں قبرستان میں دفنانا چاہئے تو کیا اس کی بیوی بھی وہاں جاسکتی ہے جہاں اس میت کو دفنایا جارہا ہے یا نہیں؟یعنی گھر سے پچاس کلو میٹر یا یہ اس کے لئے ضروری ہے کہ وہ گھر پر ہی رہے؟وہاں نہ جائے جہاں میت کو لے جائے ؟ عدت کا وقت کب سے شروع ہوگا؟ یا اس کے طرح کے اور مسائل ہیں جو ضروری ہیں ؟ براہ کرم، اس بارے میں رہنمائی فرمائیں۔ 

    سوال: اگر کسی عورت کا شوہر مرجائے تو وہ عورت عدت کہاں گذارے گی؟ کیا شوہر کے گھر پر ہی عدت گذارنا ضروری ہے؟یا وہ آزاد ہے جہاں چاہئے تو عدت گذارے؟ چاہئے میکے میں، چاہئے بھائی کے گھر میں، چاہئے شوہر کے گھر؟
     اور اگر مرد کا انتقال ہوجائے ، اب اس کو پچاس کلو میٹر دورکہیں رشتہ دار کے یہاں قبرستان میں دفنانا چاہئے تو کیا اس کی بیوی بھی وہاں جاسکتی ہے جہاں اس میت کو دفنایا جارہا ہے یا نہیں؟یعنی گھر سے پچاس کلو میٹر یا یہ اس کے لئے ضروری ہے کہ وہ گھر پر ہی رہے؟وہاں نہ جائے جہاں میت کو لے جائے ؟ عدت کا وقت کب سے شروع ہوگا؟ یا اس کے طرح کے اور مسائل ہیں جو ضروری ہیں ؟ براہ کرم، اس بارے میں رہنمائی فرمائیں۔ 

    جواب نمبر: 28695

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(م): 83=83-1/1432

    انتقال سے پہلے عورت شوہر کے ساتھ جس گھر میں رہتی تھی اسی گھر میں عدت گذارے، عورت آزاد نہیں ہے کہ جہاں چاہے عدت گزارے، ہاں اگر شوہر کے گھر میں عدت گزارنے کی کوئی صورت نہ ہو یا اور کوئی شرعی عذر ہو تو اس کی وضاحت فرماکر سوال دوبارہ کرلیا جائے، عورت عدت میں قبرستان نہیں جاسکتی، وہ گھر پر ہی رہے، شوہر کے انتقال ہوتے ہی عدت کاوقت شروع ہوجاتا ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند