• عقائد و ایمانیات >> دعوت و تبلیغ

    سوال نمبر: 22327

    عنوان: سوال یہ ہے کہ کیا چالیس دن یا چارمہینے جماعت میں لگانے کی بات قرآن سے ثابت ہے؟ براہ کرم، تفصیل سے جوا ب دیں۔

    سوال: سوال یہ ہے کہ کیا چالیس دن یا چارمہینے جماعت میں لگانے کی بات قرآن سے ثابت ہے؟ براہ کرم، تفصیل سے جوا ب دیں۔

    جواب نمبر: 22327

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(م):889=889-6/1431

    تغیر احوال اور تبدیلی طبعت میں چلہ کو بڑا دخل ہے، تخلیق انسانی کے مراحل کو اللہ نے قرآن میں اس طرح بیان فرمایا ہے: وَلَقَدْ خَلَقْنَا الْاِنْسَانَ مِنْ سُلَالَةٍ مِنْ طِیْنٍ (12) ثُمَّ جَعَلْنَاہُ نُطْفَةً فِیْ قَرَارٍ مَکِیْنٍ (13) ثُمَّ خَلَقْنَا النُّطْفَةَ عَلَقَةً فَخَلَقْنَا الْعَلَقَةَ مُضْغَةً فَخَلَقْنَا الْمُضْغَةَ عِظَامًا فَکَسَوْنَا الْعِظَامَ لَحْمًا․․ إلخ (موٴمنون) ترجمہ: اور ہم نے انسان کو مٹی کے خلاصہ (یعنی غذا) سے بنایا․․․ پھر ہم نے اس کو نطفہ سے بنایا جو کہ (ایک مدت معینہ تک) ایک محفوظ مقام (یعنی رحم) میں رہا (اور وہ غذا سے حاصل ہوا تھا) پھر ہم نے اس نطلفہ کو خون کا لوتھڑا بنایا، پھر ہم نے اس خون کے لوتھڑے کو (گوشت کی) بوٹی بنادیا پھر ہم نے اس بوٹی (کے بعض اجزاء) کو ہڈیاں بنادیا پھر ہم نے ان ہڈیوں پر گوشت چڑھادیا․․․ (موٴمنون) صحیح بخاری شریف میں مذکور ہے کہ نطفہ رحم میں چالیس روز گزرنے پر علقہ بنتا ہے، پھر چالیس روز گزرنے پر مضغہ بنتا ہے، پھر چالیس روز گزرنے پر اس کی روزی، عمر وغیرہ لکھ دی جاتی ہے۔ اسی طرح چالیس روز تک نماز باجماعت تکبیر اولیٰ کے ساتھ ادا کرنے پر جہنم کی آگ اور نفاق سے براء ت کی بشارت بھی وارد ہوئی ہے، اسی طرح چالیس دن تک مسلسل اخلاص کے ساتھ عمل صالح کرنے پر علم وحکمت عطاء ہونے کی بھی بشارت منقول ہے۔ عن عبد اللہ قال حدثنا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وہو الصادق المصدوق أن أحدکم یجمع في بطن أمہ أربعین یومًا ثم علقة مثل ذلک ثم یکون مضغة مثل ذلک ثم یبعث اللہ ملکًا فیوٴمر بأربع برزقہ وأجلہ وشقي أو سعید (صحیح بخاری: ۹۷۶)
    (۲) أنس رفعہ من صلّی أربعین یومًا في جماعة لم تَفُتْہ التکبیرة الأولی کتب اللہ لہ براء تین: براء ة من النار وبراء ة من النفاق․ (جمع الفوائد: ۲/۲۳۴) 
    (۳) من أخلص للہ أربعین یومًا ظہرت ینابیع الحکمة من قلبہ علی لسانہ (رواہ أبونعیم بسند ضعیف عن أبي أیوب کشف الکفاف: ۲/۲۳۴)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند