• معاشرت >> لباس و وضع قطع

    سوال نمبر: 12651

    عنوان:

    میں یہاں چائنا میں ہوتا ہوں، میرے ایک چائنیز دوست نے مجھ سے پوچھا کہ تم سونا کیوں نہیں پہنتے تو میں نے اس کو جواب دیا کہ مسلم مرد سونا نہیں پہن سکتے، ہمارے مذہب میں ممنوع ہے۔ اس نے مجھ سے پوچھا کہ کیوں ممنوع ہے، تو میں نے کہا کہ ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا ہے، اس نے مجھ سے دلیل پوچھی تو مجھے معلوم نہیں تھی۔ ویسے الحمد للہ ہم لوگ تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی بات کو عقیدت کے ساتھ مان لیتے ہیں، لیکن اس کے دلیل پوچھنے کی وجہ سے میرے ذہن میں بھی یہی بات آئی، کیوں کہ اللہ او رنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کسی بھی چیز کو جائز یا ناجائز قرار دیں تو اس کے پیچھے کوئی دلیل ضرور ہوتی ہے۔ تو میرا سوال ہے کہ سونا منع کرنے کی کیا حکمت ہے،اردو میں حدیث بتائیے گا، تاکہ میں اپنے دوست کو صحیح وضاحت کرسکوں، اور میری کوشش ہے کہ میں اس کو ان شاء اللہ مسلمان کروں گا۔ آپ کی دعا چاہیے۔

    سوال:

    میں یہاں چائنا میں ہوتا ہوں، میرے ایک چائنیز دوست نے مجھ سے پوچھا کہ تم سونا کیوں نہیں پہنتے تو میں نے اس کو جواب دیا کہ مسلم مرد سونا نہیں پہن سکتے، ہمارے مذہب میں ممنوع ہے۔ اس نے مجھ سے پوچھا کہ کیوں ممنوع ہے، تو میں نے کہا کہ ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا ہے، اس نے مجھ سے دلیل پوچھی تو مجھے معلوم نہیں تھی۔ ویسے الحمد للہ ہم لوگ تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی بات کو عقیدت کے ساتھ مان لیتے ہیں، لیکن اس کے دلیل پوچھنے کی وجہ سے میرے ذہن میں بھی یہی بات آئی، کیوں کہ اللہ او رنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کسی بھی چیز کو جائز یا ناجائز قرار دیں تو اس کے پیچھے کوئی دلیل ضرور ہوتی ہے۔ تو میرا سوال ہے کہ سونا منع کرنے کی کیا حکمت ہے،اردو میں حدیث بتائیے گا، تاکہ میں اپنے دوست کو صحیح وضاحت کرسکوں، اور میری کوشش ہے کہ میں اس کو ان شاء اللہ مسلمان کروں گا۔ آپ کی دعا چاہیے۔

    جواب نمبر: 12651

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 765=574/ل

     

    مردوں کے لیے سونا حرام ہونے کی اصل وجہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا مردوں کو سونا استعمال کرنے سے منع کرنا اور عورتوں کو اس کی اجازت دینا ہے، اس کی حکمت یہ ہوسکتی ہے کہ سونا ہی وہ چیز ہے جس کے ذریعہ عجمی مقابلہ میں اپنی برتری ثابت کیا کرتے تھے، نیز سونے کے ذریعہ آرائش کا رواج دنیا طلبی میں انہماک تک پہنچانے والا ہے او رمردوں کے لیے یہ دونوں چیزیں مذموم ہیں، اس کے برخلاف عورتوں میں زینت مقصود ہے تاکہ ان کے شوہر ان کی طرف رغبت کریں، اسی لیے شریعت نے ان کے حق میں رخصت سے کام لیا۔ (حجة اللہ البالغہ ورحمة اللہ الواسعہ ملخصا)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند