• متفرقات >> تصوف

    سوال نمبر: 409

    عنوان:

    بیعت کا کیا مطلب ہے؟ اگر بیعت کرنا سنت ہے تو کیوں؟

    سوال:

    بیعت کا کیا مطلب ہے؟

    اگر بیعت کرنا سنت ہے تو کیوں؟

    جواب نمبر: 40901-Sep-2020 : تاریخ اشاعت

    بسم الله الرحمن الرحيم

    (فتوى: 317/ن=294/ن)

     

    کسی بزرگ کے ہاتھ پر یہ معاہدہ کرنا کہ میں آئندہ معصیت نہ کروں گا اور تصفیہ قلب کے لیے آپ کی ہدایات پر عمل کروں گا، اس کا نام بیعت ہے اعلم أن البیعة المتوارثة بین الصوفیة علی وجوہ: أحدہا بیعة التوبة من المعاصي الخ (القول الجمیل: ص12)

     

    اس لیے کہ بیعت قرآن و حدیث سے ثابت ہے، لقولہ تعالیٰ: إِنَّ الَّذِينَ يُبَايِعُونَكَ إِنَّمَا يُبَايِعُونَ اللَّهَ [الفتح : 10] وقولہ تعالی: لَقَدْ رَضِيَ اللَّهُ عَنِ الْمُؤْمِنِينَ إِذْ يُبَايِعُونَكَ تَحْتَ الشَّجَرَةِ [الفتح : 18] وقولہ تعالیٰ: يَا أَيُّهَا النَّبِيُّ إِذَا جَاءكَ الْمُؤْمِنَاتُ يُبَايِعْنَكَ عَلَى أَن لَّا يُشْرِكْنَ بِاللَّهِ شَيْئاً وَلَا يَسْرِقْنَ وَلَا يَزْنِينَ وَلَا يَقْتُلْنَ أَوْلَادَهُنَّ وَلَا يَأْتِينَ بِبُهْتَانٍ يَفْتَرِينَهُ بَيْنَ أَيْدِيهِنَّ وَأَرْجُلِهِنَّ وَلَا يَعْصِينَكَ فِي مَعْرُوفٍ فَبَايِعْهُنَّ [الممتحنة : 12] عن عبادة بن الصامت رضي اللہ عنہ قال قال رسول اللّہ صلی اللّہ علیہ وسلم وحولہ عصابة من أصحابہ: بایعوني علی أن لا تشرکوا باللّہ شیئا ولا تسرقوا ولا تزنوا ولا تقتلوا أولادکم ولا تأتوا ببہتان تفترونہ بین أیدیکم وأرجلکم ولا تعصوا في معروف (الحدیث رواہ البخاري ومسلم) (مشکوٰة: ص13)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند