• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 14000

    عنوان:

    ہوائی جہاز میں نماز کیسے پڑھی جائے جب کہ وہ کعبہ کی طرف جار ہا ہوں یعنی سیٹ پر بیٹھے بیٹھے ہی نماز پڑھ لی جائے ؟اور کیا اس نماز میں قصر بھی کرنا ہوگا او راگر قصر نہ کیا تو گناہ تو نہیں ہوگا؟اس کے علاوہ اگر جہاز کعبہ کی طرف سے واپس آرہا ہو تو نماز کس طرح پڑھیں؟

    سوال:

    ہوائی جہاز میں نماز کیسے پڑھی جائے جب کہ وہ کعبہ کی طرف جار ہا ہوں یعنی سیٹ پر بیٹھے بیٹھے ہی نماز پڑھ لی جائے ؟اور کیا اس نماز میں قصر بھی کرنا ہوگا او راگر قصر نہ کیا تو گناہ تو نہیں ہوگا؟اس کے علاوہ اگر جہاز کعبہ کی طرف سے واپس آرہا ہو تو نماز کس طرح پڑھیں؟

    جواب نمبر: 1400001-Sep-2020 : تاریخ اشاعت

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1117=1117/م

     

    کھڑے ہوکر نماز پڑھنے کی قدرت ہو تو سیٹ پر بیٹھے بیٹھے نماز پڑھ لینا درست نہیں، ہوائی جہاز میں کھڑے ہونے کی جگہ ہوتی ہے، بلکہ نماز کے لیے جگہ مخصوص بھی ہوتی ہے، اگر معلوم ہو کہ جہاز کعبہ کی طرف جارہا ہے تو اسی جانب رخ کرکے نماز پڑھی جائے گی اور شرعی مسافت والے سفر میں قصر کرنا لازم ہے، ورنہ گناہ ہوگا۔ اور جب جہاز کعبہ کی طرف سے واپس آرہا ہو تو اس وقت بھی کعبہ (قبلہ) ہی کی طرف رخ کرکے نماز ادا کرنا ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند