• معاشرت >> ماکولات ومشروبات

    سوال نمبر: 10332

    عنوان:

    بائیں ہاتھ سے کھانا کیوں منع ہے اگر کوئی عادت کی وجہ سے مجبور ہو تو کیا یہ گناہ ہے؟ برائے مہربانی اردو میں حدیث کے حوالہ سے بتائیں۔

    سوال:

    بائیں ہاتھ سے کھانا کیوں منع ہے اگر کوئی عادت کی وجہ سے مجبور ہو تو کیا یہ گناہ ہے؟ برائے مہربانی اردو میں حدیث کے حوالہ سے بتائیں۔

    جواب نمبر: 1033201-Sep-2020 : تاریخ اشاعت

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 116=116/ م

     

    بائیں ہاتھ سے کھانے پینے کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا اور وجہ یہ بتلائی کہ بائیں ہاتھ سے شیطان کھاتا پیتا ہے، حدیث میں ہے: إذا أکل أحدُکم فَلیَأکُل بیمینہ وإذا شرِبَ فلیشربٴ بیمینہ۔ (ترجمہ: جب تم میں سے کوئی شخص کھائے تو دائیں ہاتھ سے کھائے اور جب پیئے تو دائیں ہاتھ سے پیئے) دوسری روایت میں ہے: لا یأکُلنّ أحدُکم بشمالہ ولا یَشربنَّ بھا، فإن الشیطانَ یأکلُ بشمالہ ویشرب بہا، (ترجمہ: تم میں سے کوئی ہرگز بائیں ہاتھ سے نہ کھائے اور نہ پیئے، اس لیے کہ شیطان بائیں ہاتھ سے کھاتا اور پیتا ہے) مشکاة شریف: ۳۶۳، پس دایاں ہاتھ موجود ہوتے ہوئے بائیں ہاتھ سے کھانے کی عادت بنالینا بُری عادت ہے، شیطان کی پیروی لازم آتی ہے، اس کو ترک کرنا چاہیے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند