United Arab Emirates

سوال # 5812

حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانے اور بعد میں خلفائے راشدین کے زمانے میں جب عورتیں بیمار ہوجاتیں تھیں تو ان کا علاج معالجہ (بشمول اعضائے مخصوصہ) مرد معالج کرتا تھا یا عورت؟ نیز کیا یہ کام پروفیشنلی ہو کرتا تھا؟

Published on: Jun 21, 2008

جواب # 5812

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 495=546/ل


 


اس سلسلے میں ہمیں علم نہیں البتہ اگر آپ کے سوال کا مقصد یہ ہے کہ کیا عورت اپنا علاج مرد سے کراسکتی ہے تو اس کا جواب یہ ہے کہ اگر کوئی عورت ڈاکٹر موجود نہ ہو تو بصورت مجبوری وہ اپنا علاج مرد ڈاکٹر سے کراسکتی ہے۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات